امریکی پارلیمان کی تاریخی عدم اعتماد تحریک کامیاب، ہاؤس سپیکر عہدے سے فارغ

کیون میک کارتھی کی حمایت میں 210 جب کہ مخالفت میں 216 ارکان نے ووٹ کا استعمال کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی ایوان نمائندگان نے تاریخی عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے سپیکر کیون میک کارتھی کو ان کے عہدے سے ہٹا دیا ہے، ان کی حمایت میں 210 ووٹ دیے گئے جب کہ مخالفت میں 216 ارکان نے ووٹ کا استعمال کیا۔

امریکا کی 234 سالہ پارلیمانی تاریخ میں پہلی بار ایوان نے سپیکر کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کر کے انہیں عہدے سے ہٹا دیا ہے، ہاؤس سپیکر کو ایسے وقت میں فارغ کیا گیا جب الیکشن میں محض ایک سال باقی ہے۔

کیون میک کارتھی کی برطرفی ان کی اپنی پارٹی کے اندر لڑائی اور اس کے دائیں بازو کے دھڑے سے مسلسل چیلنجوں کا نتیجہ ہے۔ ایوان نمائندگان میں حکمراں ڈیموکریٹس سے تعاون پر سخت گیر ریپبلکن اراکین میک کارتھی سے سخت ناراض تھے اور یہی ناراضی ان کے خلاف قرارداد پیش کرنے کا محرک بنی۔

ہفتے کے آخر میں حکومتی شٹ ڈاؤن سے بچنے کی کوششوں کے درمیان یہ کشیدگی عروج پر پہنچ گئی۔ ایوان نمائندگان میں سخت گیر ری پبلکن ارکان کی جانب سے میک کارتھی کے خلاف پیش کی گئی قرارداد پر ایوان نمائندگان نے 210 کے مقابلے میں 216 ووٹوں سے سپیکر پر عدم اعتماد کا اظہار کیا۔

سپیکر کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک کی کامیابی ریپبلکن پارٹی میں بڑھتے ہوئے ہنگامے کی نشاندہی کرتا ہے، جس کے سخت دائیں بازو کے دھڑے نے میک کارتھی کے جنوری میں سپیکر بننے کے بعد کئی مواقع پر مخاصمت کا ماحول بنائے رکھا۔

منگل کی شام کو ہونے والی ووٹنگ میں آٹھ ریپبلکن اراکین نے سپیکر سے علاحدگی اختیار کر لی تھی، جس سے ان کا اپنا عہدہ برقرار رکھنے کے لیے درکار اکثریت حاصل کرنے کے امکانات ختم ہو گئے تھے۔ ڈیموکریٹس نے بھی میک کارتھی سے مایوسی کا اظہار کیا تھا۔

وائٹ ہاؤس کی پریس سکریٹری کارین جاں پیئر نے کہا ہے کہ صدر جو بائیڈن کو امید ہے کہ ایوان جلد ہی ایک نئے سپیکر کا انتخاب کرے گا، کیونکہ امریکی قوم کو درپیش ہنگامی چیلنج کسی کا انتظار نہیں کریں گے۔ ’امریکی عوام ایسی قیادت کے مستحق ہیں جو ان کی زندگیوں کو متاثر کرنے والے مسائل کو مرکز نگاہ رکھے۔‘

واضح رہے کہ آئندہ ایک ہفتے تک امریکی ایوان نمائندگان سپیکر کے بغیر رہے گا کیونکہ مختلف ریپلکن اراکین کا کہنا ہے کہ انہوں نے نئے سپیکر کی تعیناتی سے متعلق فیصلے کے لیے اجلاس 10 اکتوبر کو طلب کیا ہے اور 11 اکتوبر کو نئے سپیکر کے لیے ووٹنگ متوقع ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں