بھارت کی سیکم ریاست میں شدید بارشوں سے سیلاب میں 23 بھارتی فوجی لاپتا

سیکم چین سے متصل ایک سرحدی ریاست ہے جہاں بھارت نے بڑی تعداد میں اپنے فوجی تعینات کر رکھے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بھارت کی شمال مشرقی ریاست سیکم میں فوجی حکام نے بتایا ہے کہ منگل کی رات کو لاچن وادی میں دریائے تیستا میں اچانک آنے والے سیلاب کے بعد سے فوج کے 23 اہلکار لاپتا ہو گئے ہیں۔

بدھ کی صبح گوہاٹی میں محکمہ دفاع کی جانب سے ایک بیان میں کہا گیا کہ ''وادی کے کچھ فوجی ادارے بھی متاثر ہوئے ہیں اور ان تفصیلات کی تصدیق کرنے کی کوششیں جاری ہیں۔ 23 اہلکاروں کے لاپتہ ہونے کی اطلاع ہے اور کچھ گاڑیوں کے کیچڑ کے نیچے دبے ہونے بھی کی اطلاع ہے۔ تلاش سے متعلق کارروائیاں جاری ہیں۔''

حکام نے ایک بھارتی خبر رساں ایجنسی کو یہ بھی بتایا ہے کہ خیال کیا جاتا ہے کہ یہ سیلاب بدھ کی اولین ساعتوں میں تقریبا ًڈیڑھ بجے شروع ہوا۔ شمالی سیکم کی لوناک جھیل میں بادل پھٹنے کی وجہ سے لاچن وادی کی تیستا ندی میں اچانک سیلاب کی صورت حال پیدا ہو گئی۔

مقامی میڈیا کے مطابق فوجی گاڑیوں کے بہنے کے سبب فورسز کے جوان بھی اس کی زد میں آئے اور وہ بھی سیلابی ریلے میں بہہ گئے ہیں۔ تاہم حکام نے ابھی تک انہیں صرف لا پتہ بتایا ہے اور کہا ہے کہ انہیں تلاش کیا جا رہا ہے۔

سیکم چین سے متصل ایک سرحدی ریاست ہے جہاں بھارت نے بڑی تعداد میں اپنے فوجی تعینات کر رکھے ہیں اور کہا جا رہا ہے کہ اس قدرتی آفت سے علاقے کی کئی فوجی تنصیبات کو بھی کافی نقصان پہنچا ہے۔

دریائے تیستا پر سنگتھم پل ندی کے بہنے کی وجہ سے گر گیا ہے۔ مغربی بنگال کو سیکم سے جوڑنے والی قومی شاہراہ نمبر 10 کے کئی حصے بھی بہہ گئے۔ نامچی میں سیلاب کی وجہ سے بہت سی سڑکیں بند ہو گئی ہیں یا پھر استعمال کے قابل نہیں ہیں۔

سیکم کے وزیر اعلیٰ پریم سنگھ تمانگ نے آج صبح نقصان کا جائزہ لینے کے لیے شمالی سیکم کے کچھ حصوں کا دورہ کیا۔

انہوں نے اپنی ایک ٹویٹ پوسٹ میں کیا، ''ہم سب حالیہ قدرتی آفت سے واقف ہیں، جس سے ہماری ریاست متاثر ہوئی ہے۔ ہنگامی خدمات کو متاثرہ علاقوں میں متحرک کر دیا گیا ہے، اور میں نے ذاتی طور پر دورہ کیا ہے تاکہ نقصانات کا اندازہ لگایا جا سکے اور مقامی کمیونٹی کے ساتھ بات چیت کی جا سکے۔''

سیکم حکومت نے ریاست میں ہائی الرٹ جاری کیا ہے اور لوگوں سے کہا ہے کہ وہ دریائے تیستا سے دور رہیں۔ مغربی بنگال میں جلپائی گڑی انتظامیہ نے احتیاطی اقدام کے طور پر دریا کے پاس کے ترائی علاقوں سے لوگوں کو نکالنا شروع کر دیا ہے۔

رواں برس جون کے اوائل میں بھی شمالی سیکم ضلع میں مون سون کی شدید بارشوں کی وجہ سے تباہ کن سیلاب آیا تھا، جس سے کافی نقصان ہوا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں