فزکس کا نوبیل انعام تین سائنسدانوں کے نام

ٹیم میں شامل این ایلہوئیلر تاریخ کی پانچویں خاتون ہیں جنہیں طبعیات کے نوبیل انعام سے نوازا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

رائل سوئیڈش اکیڈمی آف سائنسز نے سال 2023 کے لیے فزکس کا نوبیل انعام حاصل کرنے والے سائنسدانوں کے ناموں کا اعلان کر دیا۔

اس سال فزکس کا نوبیل انعام ایٹو سیکنڈ پلسز آف لائٹ پر تحقیق کرنے والے پیئری ایگوسٹنی (اوہائیو یونیورسٹی، امریکہ)، فیرینگ کروز (میکس پلینک انسٹیٹیوٹ، جرمنی) اور این ایلہوئیلر (لُند یونیورسٹی سوئیڈن) کے نام رہا۔

ایٹو سیکنڈ فزکس کا ایک ایسا شعبہ ہے جس میں سائنس دان وقت کے انتہائی چھوٹے پیمانے پر انتہائی چھوٹے ذرات کو دیکھتے ہیں۔ ایٹو سیکنڈ ایک نینو سیکنڈ کا ایک ارب واں حصہ ہوتا ہے۔

نوبیل انعام حاصل کرنے والے سائنس دانوں نے ایسے تجربات وضع کیے جو انتہائی تیز لیزر ارتعاش پیدا کر سکتے ہیں اور دنیا کو انتہائی چھوٹے پیمانے پر پرکھنے میں مدد کے لیے استعمال کیے جا سکتے ہیں جبکہ طبعیات سمیت دیگر سائنسی شعبوں میں بھی اس کا استعمال کیا جا سکتا ہے۔

نوبیل انعام حاصل کرنے والے سائنس دانوں کو 10 لاکھ امریکی ڈالر کی رقم بھی دی جائے گی۔

ٹیم میں شامل این ایلہوئیلر تاریخ کی پانچویں خاتون ہیں جن کو فزکس میں نوبیل انعام سے نوازا گیا۔ اس سے قبل 221 ایوارڈ یافتہ خواتین میں 1903 میں میری کیوری، 1963 میں ماریہ جیوپرٹ مایر، 2018 میں ڈونا اسٹرک لینڈ اور 2020 میں اینڈریا گھیز نے فزکس میں نوبیل انعام حاصل کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں