امریکی شہری کو طیارے میں سوتی ہوئی خاتون مسافر سے چھیڑ چھاڑ کرنے پر جیل کی سزا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ہوائی جہاز میں سوتی ہوئی خاتون مسافر کو چھیڑنے والے ایک امریکی کو جمعرات کو تقریباً دو سال کے لیے جیل بھیج دیا گیا۔

50 سالہ محمد جواد انصاری نے فروری 2020 میں کلیولینڈ سے لاس اینجلس جانے والی فلائٹ کی درمیانی نشست پر سوتی ہوئی ایک خاتون کی اندرونی ران پر ہاتھ رکھا تھا۔

حکام نے بتایا کہ متأثرہ خاتون جس نے لباس پہنا ہوا تھا، جاگ گئی اور اپنی سیٹ چھوڑ کر کیبن کریو کو حملے کے بارے میں بتانے سے پہلے اس نے انصاری کا ہاتھ دور ہٹا دیا۔

محکمۂ انصاف نے کہا کہ انصاری جس نے بدسلوکی پر مبنی جنسی ربط کے الزام سے انکار کیا تھا، مئی میں چار روزہ مقدمے کی سماعت کے بعد قصوروار پایا گیا۔

وکیلِ استغاثہ نے لاس اینجلس کی ایک عدالت کو بتایا کہ انصاری کی "چھیڑ چھاڑ سے (متأثرہ خاتون) حیران اور خوفزدہ رہ گئی اور گواہان نے گواہی دی کہ وہ پرواز میں باقی وقت سسکیاں لیتی رہی۔

اب متأثرہ خاتون دورانِ سفر پروازوں میں "سونے کی جدوجہد کرتی رہتی ہے کیونکہ اسے مسلسل یہ فکر ستاتی رہتی ہے کہ 'اگر کسی نے مجھے چھوا تو کیا ہوگا؟'"

امریکی ضلعی جج فرنینڈو اینلے روچا نے انصاری کو 21 ماہ کے لیے جیل بھیج دیا اور 40,000 ڈالر سے زائد جرمانہ ادا کرنے کا حکم دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں