فلسطین اسرائیل تنازع

حماس اور اسرائیل کے درمیان کشیدگی میں اضافے پرامریکا میں تشویش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

وائٹ ہاؤس کے قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان نے اتوار کو اس بات کی تصدیق کی ہے کہ امریکا کو خدشہ ہے کہ حماس اور اسرائیل کے درمیان تنازعہ مزید " شدت" اختیار کرسکتا ہے جس کے بعد ممکنہ طور پر ایران کی مداخلت کا خدشہ بڑھتا جا رہا ہے۔

سلیوان نے سی بی ایس کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا کہ "ہم اس مفروضے کو رد نہیں کر سکتے کہ ایران کسی نہ کسی طریقے سے براہ راست مداخلت کا فیصلہ کرے گا اور ہمیں کسی بھی امکان کے لیے تیار رہنا چاہیے۔"

انہوں نےکہا کہ "یہ ایک خطرہ ہے جس سے ہم تنازع کے آغاز سے ہی واقف ہیں" انہوں نے مزید کہا کہ صدر جو بائیڈن مشرقی بحیرہ روم میں طیارہ بردار بحری جہاز تعینات کرکے تیزی سے اور فیصلہ کن طور پر آگے بڑھے ہیں"۔

ایک اور تناظر میں سلیوان نے کہا ہے کہ امریکا اپنے شہریوں کو غزہ سے مصر جانے کے لیے محفوظ راستہ فراہم کرنے کے امکانات پر توجہ دے رہا ہے۔

اسرائیلی فوج نے آج اتوار کو کہا کہ وہ آٹھ روز قبل حماس کی کارروائی کے جواب میں متوقع زمینی حملے سے قبل غزہ کے باشندوں کو پٹی کے جنوب میں جانے کی اجازت دے گی۔

سلیوان نے انٹرویو کے دوران کہا کہ امریکا غزہ چھوڑنے والی شہری آبادی کو خوراک، پانی، ادویات اور پناہ گاہ کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے کام کر رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں