حماس کو ختم کرنے کے بعد غزہ کو اتھارٹی یا کسی یو این ادارے کے حوالے کر دینگے: لاپڈ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی اپوزیشن لیڈر یائر لاپڈ نے کہا ہے کہ حماس کے بعد غزہ میں اسرائیل کا منصوبہ ابھی تک واضح نہیں ہوا ہے۔ ان کے بیان سے اشارہ ملا کہ اگر حماس کا خاتمہ ہو گیا تو اسرائیل غزہ کو اتھارٹی یا اقوام متحدہ کے کسی ادارے کے حوالے کر دے گا۔

لاپڈ کے بیانات ایک ایسے وقت میں سامنے آئے ہیں جب اسرائیلی فوج نے غزہ پر فضائی، سمندر اور زمین سے مربوط حملے سمیت آپریشنل منصوبوں کے ایک سیٹ پر عمل درآمد کے لیے اپنی تیاری کا اعلان کیا ہے۔

فوج نے کہا ہے کہ زمینی بازو اور ٹیکنالوجی و لاجسٹکس ڈپارٹمنٹ اب فوجی دستوں کو لڑائی کو وسعت دینے کے لیے تیار کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ فوج نے کہا کہ فارورڈ لاجسٹکس مراکز کے قیام کا مقصد جنگی افواج کو تیزی سے آگے بڑھنے اور خود کو لیس کرنے کی اجازت دینا ہے۔

فوجی ترجمان نے کہا کہ حالیہ دنوں میں لڑائی کے لیے ضروری آلات کو فورسز کی پوزیشنوں پر منتقل کر دیا گیا ہے۔ اس مرحلے پر ٹیکنالوجی اور لاجسٹکس ڈویژن کے مختلف یونٹ جدید آلات کی بحالی کا کام مکمل کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔

قبل ازیں ہفتہ کے روز ایک سینئر اسرائیلی عہدیدار نے اعتراف کیا کہ 7 اکتوبر کو حماس کی طرف سے اسرائیل پر شروع کیے گئے حیران کن حملے سے قبل انٹیلی جنس سروسز کے جائزوں میں غلطیاں ہوئی تھیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں