اسرائیل رفح بارڈر گذرگاہ کو دوبارہ کھولنے سے روک رہا ہے: مصر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مصری وزیرِ خارجہ سامح شکری نے پیر کے روز کہا کہ اسرائیلی حکومت نے تاحال کوئی ایسا مؤقف اختیار نہیں کیا ہے جس کے تحت مصر اور غزہ کی پٹی کے درمیان رفح سرحدی گذرگاہ کو کھولنے کی اجازت دی جائے۔

شوکری نے غزہ میں فلسطینی عوام کو درپیش صورتحال کو "خطرناک" قرار دیتے ہوئے کہا کہ جب سے تنازع شروع ہوا ہے مصر کا مقصد رفح گذرگاہ کو فعال رکھنا ہے۔

غزہ کے واحد داخلے کے ذریعے امداد کی فراہمی اور محدود انخلاء کی تقدیر پر پیر کے روز سوالیہ نشان تھا جب مصری ذرائع نے کہا کہ عارضی جنگ بندی ہو گئی تھی لیکن اسرائیل اور حماس نے کہا کہ کوئی معاہدہ نہیں ہوا تھا۔

امریکی وزیرِ خارجہ انٹونی بلنکن نے اتوار کو قاہرہ میں کہا تھا کہ مصر کے جزیرہ نما سینائی اور غزہ کے درمیان رفح گذرگاہ کو دوبارہ کھول دیا جائے گا اور امداد کی فراہمی کے لیے اسرائیل کے ساتھ ایک طریقۂ کار پر اتفاق کیا گیا ہے۔

حماس کے عسکریت پسند گروپ کے حملے کے جواب میں اسرائیل کی جانب سے شدید بمباری اور ناکہ بندی شروع کرنے کے بعد سے غزہ کے 20 لاکھ سے زائد باشندے محاصرے میں ہیں۔ غزہ کے تقریباً 600,000 باشندے بے گھر ہو چکے ہیں جبکہ رسد ختم ہو رہی ہے۔

مصر نے کہا ہے کہ رفح کو بند کر دیا گیا ہے لیکن فلسطین کی جانب اسرائیلی حملوں نے اسے ناکارہ بنا دیا ہے۔

دو مصری سکیورٹی ذرائع نے رائٹرز کو بتایا تھا کہ جنوبی غزہ میں کئی گھنٹوں تک جاری رہنے والی جنگ بندی پیر کو 0600 بجے جی ایم ٹی شروع ہونے پر اتفاق کیا گیا تھا تاکہ امداد کے داخلے کے ساتھ ساتھ غزہ سے غیر ملکی پاسپورٹ کے حامل افراد کے محدود انخلاء کی اجازت دی جاسکے۔

تاہم اسرائیل نے اس کی تردید کی۔

وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کے دفتر سے ایک بیان میں کہا گیا ہے، "غیر ملکیوں کو نکالنے کے بدلے غزہ میں فی الحال کوئی جنگ بندی اور انسانی امداد نہیں ہے۔"

حماس کے اہلکار عزت الرشیق نے بھی رائٹرز کو بتایا کہ میڈیا کی ان خبروں میں کوئی صداقت نہیں تھی کہ رفح دوبارہ کھل رہا تھا یا جنگ بندی ہوئی تھی۔

مصری سکیورٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ وہ پہلے سے تصدیق ملنے کے بعد اسرائیلی انکار سے پریشان تھے۔

رفح کے ایک ذریعے نے بتایا کہ پیر کو گذرگاہ پر کوئی بمباری نہیں ہوئی تھی اور گذرگاہ کا مصری حصہ تیار تھا۔

وہاں کے دو ذرائع اور ایک عینی شاہد نے رائٹرز کو بتایا کہ پیر کو مصر کے قریبی قصبے العریش میں این جی اوز اور متعدد ممالک کی طرف سے سینکڑوں ٹن امداد کے ٹرک غزہ میں داخل ہونے کی اجازت کے منتظر تھے۔

رائٹرز کی ویڈیو میں اقوامِ متحدہ کے پرچم والے ایندھن کے ٹرک اسرائیل کے زیرِ قبضہ کریم شالوم گذرگاہ کے ذریعے غزہ سے مصر کے لیے روانہ ہوتے نظر آ رہے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں