جو بائیڈن کا دورہ اسرائیل غزہ میں زیادہ تباہی کی منظوری ثابت ہوا: ترکیہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ترکیہ سمجھتا ہے کہ رواں ہفتے ہونے والے امریکی صدر جو بائیڈن کا دورہ تل ابیب دراصل غزہ میں اسرائیلی تباہی کی منظوری دینے کے لیے تھا۔ ترک وزیر خارجہ کے مطابق اس بات کو تاریخ نے بھی نوٹ کر لیا ہے۔

وزیر خارجہ ترکیہ ایک سرکاری ٹی وی 'ٹی آر ٹی خبر' سے گفتگو کر رہے تھے۔ وزیر خارجہ خاقان فیدان نے کہا اسرائیل نے غزہ کے الاھلی المعمدانی ہسپتال پر حملے کے بارے میں اپنا بیانیہ تبدیل کیا ہے۔ ہمیں امید ہے کہ ہفتے کے روز مصر میں ہونے والی کانفرنس کے نتیجے میں اسرائیلی جارحیت روکنے پر اتفاق ہو گا۔

ایک سوال کے جواب میں ترک وزیر خارجہ نے کہا 'یقیناً جو بائیڈن کا جس طرح اسرائیل کا دورہ ہوا ہے یہ غزہ میں تباہی کی منظوری دینا ہی تھا۔' ہاں یہ امریکی اپروچ بہت ساروں کے لیے حیران کن نہیں ہے۔ لیکن اس سے یہ تصور ضرور کیا گیا ہے کہ امریکہ کے لیے اس کے مختلف نتائج برآمد سامنے آئیں گے۔

خاقان فیدان نے کہا ' ترکیہ کی طرف سے ایک تجویز پیش کی جا رہی تھی کہ غزہ اور اسرائیل کے درمیان پیدا شدہ حالات میں بہتری کے لیے ایک 'گارنٹر شپ' کا اہتمام کیا جائے ۔ اس سلسلے میں ترکیہ فلسطینیوں کی طرف سے ایک ضامن بن سکتا ہے۔ اس معاملے میں انہوں نے خطے کے ملکوں کوبھی شرکت کے لیے کہا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں