فلسطین اسرائیل تنازع

چین کا مسئلہ فلسطین پر فوری بین الاقوامی کانفرنس بلانے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

چین نے منگل کے روز اعلان کیا ہے کہ اس کے وزیر خارجہ نے اپنے اسرائیلی ہم منصب کو یقین دلایا ہے کہ "تمام ممالک" کو اپنے دفاع کا حق حاصل ہے۔ اسرائیل اور حماس کے درمیان دو ہفتے سے زیادہ عرصہ قبل جنگ شروع ہونے کے بعد سے دونوں وزراء کے درمیان یہ اپنی نوعیت کا پہلا رابطہ ہے۔

ایک بیان میں چینی وزارت خارجہ نے بتایا کہ وزیرخارجہ وانگ یی نے اپنے اسرائیلی ہم منصب ایلی کوہن سے بات کرتے ہوئے کہا کہ "تمام ممالک کو اپنے دفاع کا حق حاصل ہے" انہوں اس بات پر زور دیا کہ ساتھ ہی ان ممالک کو "بین الاقوامی انسانی ہمدردی کے اصولوں کی پاسداری کرنی چاہیے تاکہ جنگ میں شہریوں کی حفاظت کو یقینی بنایا جا سکے"۔

انہوں نے کہا کہ "ہم امن کی طرف لے جانے والے کسی بھی فیصلے کی بھرپور حمایت کرتے ہیں"۔

انہوں نے مزید کہا کہ بیجنگ فلسطینی اسرائیل مفاہمت میں اپنا حصہ ڈالنے کی پوری کوشش کرے گا۔ چین امن کی طرف لے جانے والے کسی بھی فیصلے کی بھرپور حمایت کرے گا۔ انہوں نے غزہ میں جاری تنازع کو "جنگ اور امن کے درمیان ایک بڑا انتخاب" قرار دیا۔

وانگ یی نے اسرائیل سے وہاں چینی شہریوں اور اداروں کی حفاظت کے لیے موثر اقدامات کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔

"اپنے دفاع کے دائرہ کار سے باہر"

چین نے لڑائی کے دوران شہریوں پر تشدد اور حملوں کی مذمت کی ہے۔ وانگ یی نے کہا کہ اسرائیل کے اقدامات "اپنے دفاع کے دائرہ کار سے باہر ہیں" تاہم انہوں نے حماس کا نام نہیں لیا۔

فلسطینی وزیر خارجہ ریاض المالکی کے ساتھ ایک الگ فون پر بات چیت میں مسٹر وانگ نے کہا کہ وہ غزہ کے لوگوں کے ساتھ "گہری ہمدردی رکھتے ہیں اور انہیں جس چیز کی سب سے زیادہ ضرورت ہے وہ جنگ کو روکنے اور امن کو فروغ دینے کی ہے۔

"بین الاقوامی امن کانفرنس"

وانگ نے کہا کہ چین اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان امن مذاکرات کی بحالی کو فروغ دینے کے لیے جلد از جلد ایک "زیادہ فیصلہ کن، زیادہ موثر اور وسیع تر بین الاقوامی امن کانفرنس" منعقد کرنے کا مطالبہ کرتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو اپنی ذمہ داری کو مؤثر طریقے سے نبھانا چاہیے، بین الاقوامی برادری کو تیزی سے حرکت میں آنا چاہیے اور خطے سے باہر کے ممالک خاص طور پر بڑی طاقتوں کو معروضی اور غیر جانبدار ہونا چاہیے۔"

چین اور روس کا موقف یکساں ہے کہ فلسطینی عوام کے جائز قومی حقوق پورے نہیں کیے گئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں