فلسطین اسرائیل تنازع

فلسطین کے مسئلے پر کونسل کی دہائیوں سے جاری خاموشی ناقابل قبول ہے: شہزادہ فیصل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

سعودی عرب کے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے منگل کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ہیڈ کوارٹر میں غزہ بحران پر ایک اعلیٰ سطح کے اجلاس کے موقعے پر تمام شہریوں کی اموات کی شدید مذمت کی ہے۔

سعودی عرب نے منگل کو شہریوں کو نشانہ بنانے پر اپنی ’واضح‘ مذمت کا اعادہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ ’وہ کوئی بھی ہوں‘۔

عرب نیوز کے مطابق یہ بیان اس وقت سامنے آیا ہے جب سعودی عرب نے بین الاقوامی قوانین اور کنونشنوں کا احترام کرتے ہوئے غزہ میں فوجی کارروائیوں میں اضافے کو روکنے، ’خونریزی ختم کرنے‘ اور یرغمالیوں کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے کہا کہ ان کے ملک نے ’دوست اور برادر ممالک‘ کے ساتھ مل کر ان مقاصد کو حاصل کرنے اور تشدد کے دور کو ختم کرنے کی ہر ممکن کوشش کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ فلسطینی عوام محصور ہیں اور غزہ پر اسرائیلی جنگ میں اضافے کا شکار ہیں۔

سعودی وزیر خارجہ کے مطابق: ’(فوجی کارروائیوں) میں (فلسطینی) شہری سہولیات، سکولوں، ہسپتالوں، بنیادی ڈھانچے کو نشانہ بنانے کا عمل جاری ہے۔ وہ خواتین، بچوں اور بوڑھوں سمیت ہزاروں شہریوں کی جانیں لے چکے ہیں۔ انہوں نے ہزاروں شہریوں کو زخمی کیا ہے۔

’اسرائیلی قابض افواج کی طرف سے غزہ کے باشندوں کے خلاف اس اجتماعی سزا کو ختم کرنے اور انہیں زبردستی بے گھر کرنے کی کوششوں کو ختم کرنے میں بین الاقوامی برادری کی آج تک ناکامی، ہمیں سلامتی اور استحکام کے قریب نہیں لے جا سکے گی۔‘

شہزادہ فیصل بن فرحان غزہ پر اسرائیلی جنگ پر تبادلہ خیال کے لیے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اعلیٰ سطح کے اجلاس کے دوران گفتگو کر رہے تھے۔

اس کی میزبانی برازیل نے کی تھی، جس کے پاس اس ماہ کونسل کی گردشی صدارت ہے۔

شرکا میں اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیریس، حماس کے سات اکتوبر کے حملوں کے اسرائیلی متاثرین کے لواحقین اور 85 سے زائد ممالک کے نمائندے شامل تھے۔

شہزادہ فیصل نے غزہ کی پٹی میں ہزاروں شہریوں کی جانیں لینے والی خطرناک پیش رفت کے بعد تکلیف دہ حالات میں یہ اجلاس منعقد کیا، شہزادہ فیصل نے ایک آنے والی انسانی تباہی اور خطے اور وسیع دنیا کی سلامتی کے لیے خطرناک اثرات سے خبردار کرتے ہوئے کہا۔

انہوں نے کہا کہ فلسطین کے مسئلے پر کونسل کی خاموشی ’دہائیوں سے جاری ہے‘ اور ناقابل قبول ہے۔

شہزادہ فیصل بن فرحان نے کہا کہ ’یہ کونسل اپنی خوش فہمی، اس بحران کی قیمت، جان و مال کے نقصانات اور خطے کی سلامتی اور استحکام کو لاحق خطرات کی ذمہ دار ہے۔

’بین الاقوامی امن اور سلامتی کو برقرار رکھنا اس کونسل کے کاموں میں سب سے آگے ہے۔ تاہم آج ہم دیکھتے ہیں کہ وہ اپنا کردار ادا کرنے سے قاصر ہے۔ اس بحران کو حل کرنے کے لیے کسی قرارداد تک پہنچنے میں دیر ہو چکی ہے، کیونکہ اسرائیل بین الاقوامی کنونشنز بشمول بین الاقوامی انسانی قانون کی خلاف ورزیاں جاری رکھے ہوئے ہے۔ اس سے بین الاقوامی قانونی جواز کے میکانزم کی ساکھ پر شک پیدا ہوتا ہے۔‘

شہزادہ فیصل نے دیگر عرب وزرائے خارجہ اور عہدیداروں سے ملاقات کی، جس کے دوران مشرق وسطیٰ کی ابھرتی ہوئی صورت حال، خاص طور پر مسئلہ فلسطین پر پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

شہزادہ فیصل نے کہا: ’ہم سب یہاں ایک متحد پیغام کے ساتھ موجود ہیں کہ مزید تشدد اس کا جواب نہیں ہے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’تمام شہریوں کی زندگیاں تحفظ کی مستحق ہیں اور اس میں غزہ میں فلسطینی شہریوں کی زندگیاں بھی شامل ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ہم سب یہاں ایک ساتھ کھڑے ہیں اور فوری جنگ بندی، غزہ کی ناکہ بندی کو فوری طور پر ختم کرنے اور امن عمل کی طرف واپسی کا مطالبہ کر رہے ہیں۔‘

سعودی وزیر خارجہ نے فلسطینی عوام کی تکالیف کو دور کرنے کے لیے ایک ’حقیقی، سنجیدہ نقطہ نظر‘ پر زور دیا۔

انہوں نے کہا کہ ’مسئلہ فلسطین کے حل کے لیے عالمی برادری کے اپنے موجودہ وعدوں پر قائم رہے بغیر ہم کبھی بھی منصفانہ امن نہیں دیکھ سکیں گے۔‘

بقول شہزادہ فیصل: ’اس کے بغیر، ہم اپنے خطے میں حقیقی سلامتی حاصل نہیں کر سکتے۔ اس پیغام پر ہم سب متحد ہیں اور ہمیں امید ہے کہ عالمی برادری ان نظریات کی حمایت کے لیے اکٹھی ہو گی۔‘

جب سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل سے پوچھا گیا کہ کیا وہ حماس کی مذمت کرتے ہیں؟ تو انہوں نے کہا: ’ہم تمام شہریوں کے قتل کی مذمت کرتے ہیں۔‘

شہزادہ فیصل نے اجلاس میں شرکت برازیل کے وزیر خارجہ مورو ویرا کی دعوت پر کی، جو اس وقت سلامتی کونسل کی صدارت کر رہے ہیں۔

اس اجلاس کا مقصد غزہ اور اس کے آس پاس کے علاقوں میں جاری بحران پر توجہ دینا اور بین الاقوامی قوانین کے مطابق امن و استحکام کے حصول کی اہمیت کو اجاگر کرنا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں