غزہ میں 'مغویوں' کو صرف اسرائیلی سمجھتے ہیں: حماس

اسرائیلی بمباری کی موجودگی میں انہیں رہائی نہیں مل سکتی: ابو مرزوق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

روس میں موجود حماس کے نمائندے نے غزہ میں حماس کی قید میں تمام افراد کو اسرائیلی قرار دیتے ہوئے کہا 'یرغمالیوں کے پاس اسرائیل کے علاوہ بھی اگر کسی ریاست کا پاسپورٹ یا شہریت ہے تو ہمارے نزدیک اور اول وآخر اسرائیلی ہی ہیں۔'

حماس کا غزہ میں قید افراد کے بار میں دوٹوک موقف روسی میڈیا کے ذریعے سامنے آیا ہے۔ 'حماس نمائندے کے مطابق چونکہ یہ سب( مغویان) اول و آخر اسرائیلی شہری ہیں اس لیے انہیں اسرائیل کی طرف سے غزہ پر جاری بمباری کی موجودگی میں کسی صورت رہائی نہیں دی جا سکتی۔'

ڈاکٹر موسیٰ ابو مرزوق اس سے قبل روس کے انتہائی اہمیت کے حامل اپنے دورے کے دوران روس اور ایران کے نائب وزرائے خارجہ کے ساتھ بھی الگ الگ ملاقاتیں کر چکے ہیں۔ یقیناً ان ملاقاتوں میں مشرق وسطیٰ کا مستقبل اور اسرائیل حماس جنگ اور غزہ کی موجودہ صورت حال ہی اہم موضوعات تھے۔

روسی میڈیا کے مطابق روس میں حماس کے نمائندے کے طور پر آنے والے حماس کے پولٹ بیورو کے رکن ابو مرزوق نے کہا 'امریکہ، فرانس، اٹلی، سپین سمیت کئی ملکوں نے ان سے رابطہ کیا ہے کہ ان کے شہریوں کو غزہ سے رہا کر دیا جائے۔'

واضح رہے غزہ کے پاس قید 200 کے قریب افراد میں سے ان ملکوں کے بقول کئی ان کے شہری بھی ہیں۔ اس لیے ان کے شہریوں کو رہا کر دیا جائے۔

ابو مرزوق نے کہا اس کے علاوہ روس کی طرف سے اس بارے میں رائے کا بھی جائزہ بہت مثبت انداز میں اور پوری توجہ سے لیا ہے۔' لیکن حماس مغویان کو امریکی، فرانسیسی وغیرہ کے طور پر نہیں دیکھتا بلکہ صرف اسرائیلی کے طور پر دیکھتا اور جانتا ہے۔ 'ہمارے لیے یہ سب اسرائیلی ہیں۔'

ایک اور حماس نمائندے ابو حامد نے ماسکو میں ایک اخبار کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا حماس کو ان مغویان کو وقت چاہیے تاکہ ان تمام مغویان کو اچھی طرح سمجھ اور دیکھ سکے جو مختلف گروپوں کے پاس غزہ میں قید ہیں۔

اسرائیل میں روسی سفیر نے اسی ہفتے کہا تھا روسی اسرائیلی شہری بھی ان مغویان میں ہو سکتے ہیں۔ دوسری جانب اسرائیل کا کہنا ہے کہ غزہ میں اس کے مغویان میں کئی ایسے ہیں جن کے پاس دوسرے ملکوں کی شہریت اور پاسپورٹ ہیں، ان دوسرے ملکوں کی تعداد 25 ہے۔

بتایا جاتا ہے کہ اسرائیلی مغویان کی بڑی تعداد کے پاس دوہری شہریت ہے۔کم اسرائیلی محض اسرائیلی شہریت کے حامل ہیں۔ ادھر روس نے جمعہ کے روز اس بات کا دفاع کیا ہے کہ حماس نماےندے روس کے دورے پر بلائے گئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں