مشرق وسطیٰ

عراق میں امریکی فوجی پر حملہ آور ڈرون مار گرایا گیا

حریر فوجی اڈے سے کسی نقصان کی تصدیق نہیں ہوئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عراق میں ایک اہم امریکی فوجی اڈے کے علاقے میں حملہ آور ڈرون کو مار گرایا گیا ہے۔ ڈرون طیارے کو امریکی فوج کی طرف سے مار گرانے کی یہ کامیابی 'حریر ملٹری بیس' پر ملی ہے۔ یہ امریکی فوجی اڈہ شمالی عراق میں واقع ہے۔

فوجی ذرائع کے مطابق ابھی یہ تصدیق نہیں کی جا سکتی کہ جمعرات کے روز مار گرائے گئے اس ڈرون سے فوجی اڈے پر کوئی نقصان ہوا یا کوئی نقصان نہیں ہوا ہے۔

واضح رہے سات اکتوبر جب سے اسرائیل اور حماس کی جنگ چھڑی ہے امریکہ کھل کر اسرائیل کے ساتھ ہے اس لیے اس کے خطے میں فوجی اڈے بھی نشانہ بن رہے ہیں۔

جس سے ایک سخت کشیدگی اور خوف کے بادل خطے پر منڈلا رہے ہیں۔ عراق میں امریکہ کے 2500 فوجی موجود ہیں جبکہ 900 امریکی فوجی شام میں تعینات ہیں۔

اب تک شام اور عراق میں کئی بار امریکی فوجی اڈوں کو ڈرونز اور راکٹوں سے نشانہ بنانے کی کوشش ہو چکی ہے۔ اس کے باوجود کہ امریکہ کا ابھی تک کوئی بڑا نقسان نہں ہوا ہے لیکن خطے میں ایک خوف اور بے یقینی جنم لے رہی ہے۔

ادھر اسرائیلی بمباری اور غزہ پر حملوں میں شدت کے باعث اب تک 9061 سے زائد فلسطینی ہلاک ہو چکے ہیں۔ جبکہ اسرائیل کے حملوں نے لبنان کے سرحدی اور شام کے اندر تک مار کی ہے۔ ادھر مصر میں بھی اسرائیلی ٹینک کے گولے غلطی سے فائر ہو کر کئی مصری فوجیوں کو زخمی کر چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں