چرچل کا کروڑوں کی مالیت کا سنہرا ٹوائلٹ چور لے اڑے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

برطانیہ کی ایک عدالت سر ونسٹن چرچل کے زیراستعمال رہنے والے ایک قیمتی سنہرے ٹوائلٹ کو چوری کرنے کے الزام میں چار ملزمان پر مقدمہ چلا رہی ہے۔

برطانیہ کے عدالتی ذرائع کے مطابق چار افراد پرسنہ 2019ء میں ایک انگلش کنٹری مینشن سے 18 قیراط سونے کا ٹوائلٹ چوری کرنے کا الزام ہے۔

بیت الخلا جس کی مالیت 4.8 ملین پاؤنڈ (5.9 ملین ڈالر) ہے ستمبر 2019 میں جنوبی انگلینڈ میں آکسفورڈ کے قریب ووڈ اسٹاک کے بلین ہائیم پیلس سے چوری ہوا تھا۔

یہ ٹوائلٹ محل میں اطالوی فنکار ماریزیو کیٹیلان کی ایک نمائش میں سب سے نمایاں پرکشش مقامات میں سے ایک تھا جو مارلبرو کے ڈیوکس کی رہائش گاہ کے طور پر کام کرتا تھا اور سابق برطانوی وزیر اعظم ونسٹن چرچل کی پیدائش کا گواہ تھا.

18ویں صدی کی یہ پرتعیش رہائش گاہ یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثے کی فہرست میں شامل ہے۔

کراؤن پراسیکیوشن سروس (سی پی ایس) جو انگلینڈ اور ویلز میں مقدمات کو عدالت میں لانے کی ذمہ دارہے نے پیر کو کہا کہ چاروں افراد جن کی عمریں 35 سے 39 کے درمیان ہیں 28 نومبر کو آکسفورڈ کی عدالت میں پیش ہوں گے۔

39 سالہ جیمز شن کو چوری اور مجرمانہ جائیداد کی منتقلی کی سازش اور جائیداد کی مجرمانہ منتقلی کے ایک اور الزام کا سامنا ہے۔

اس کے علاوہ 38 سالہ مائیکل جونز کو چوری کے الزام کا سامنا ہے جبکہ 35 سالہ فریڈ ڈو اور39 سالہ بورا گوکوک پر مجرمانہ طور پر یہ ٹوائلٹ چوری کرنے کا الزام ہے۔

زائرین قیمتی گولڈن ٹوائلٹ استعمال کرنے کے لیے ملاقاتیں بک کر سکتے ہیں، لیکن گاہک کو صرف تین منٹ کا وقت دے کر انتظار میں لگے لوگوں کو کم کرسکتے ہیں۔

نیو یارک کے گوگن ہائیم میوزیم میں اس سال کے دوران اس ٹوائلٹ کو 100,000 سے زیادہ لوگوں نے استعمال کیا۔

برطانوی پولیس نے اس وقت کہا تھا کہ چور چھٹی کے وقت بلین ہیم پیلس میں گھس گئے اور بیت الخلا چوری کر کے اسے سیوریج سسٹم سے منقطع کر دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں