مشرق وسطیٰ

عرب واسلامی سربراہان نے اسرائیل کے حق دفاع کو مسترد کر دیا

اسرائیل ایک قابض حکومت قرار؛ غزہ میں فوری جنگ بندی کا مطالبہ: مشترکہ کانفرنس کا اعلامیہ جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

عرب اور اسلامی ممالک کے سربراہان نے اسرائیل کے حق دفاع کے دعوے اور استدلال کو مسترد کر تے ہوئے فوری جنگ بندی اور امدادی کارورائیاں شروع کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

عرب اسلامی مشترکہ سمٹ سربراہ کانفرنس اختتامی اعلامیہ میں غزہ کے اندر جاری اسرائیلی جنگ اور بمباری کو فوری روکنے کے لیے اقدامات پر زور دیا گیا ہے۔

عرب ملکوں اور اسلامی ممالک کے سربراہان کی مشترکہ سربراہی کانفرنس سعودی عرب میں میزبانی میں ہفتے کے روز منعقد کی گئی۔

اعلامیے میں غزہ کا محاصرہ ختم کرنے، علاقے میں انسانی امداد کی اجازت دینے اور اسرائیل کے ہتھیاروں کی برآمدات روکنے کا بھی مطالبہ کیا گیا ہے۔

اس کانفرنس میں شریک مسلم وعرب دنیا کے سبھی سربراہان نے دوٹوک اور متفقہ انداز میں غزہ پر اسرائیل کی بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی پر مبنی جنگ کو مسترد کر دیا اور کہا ہے اسرائیل کے فلسطینیوں کے خلاف حق دفاع کا دعویٰ کوئی جواز نہیں رکھتا۔

مشترکہ سربراہ کانفرنس نے اپنے جاری کردہ اعلامیہ میں غزہ پر اسرائیلی جارحیت کی بھی مذمت کرتے ہوئے اسرائیلی جارحیت کو جنگی جرم قرار دیا ہے۔ اعلامیہ میں اسرائیل کی طرف سے ایک ماہ سے زائد عرصے پر محیط اور جاری بمباری کو غیر انسانی اور فلسطینیوں کے قتل عام کا نام دیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں