برسلز: 20000 سے زائد مظاہرین کا غزہ میں اسرائیلی بمباری کے خلاف احتجاج

جنگ بندی اور اسرائیلی وزیر اعظم کو جنگی جرائم میں گرفتار کرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بیلجئیم کے دارالحکومت برسلز میں غزہ پر اسرائیلی بمباری اور شہریوں کی ہلاکت کے خلاف 20 ہزار سے زائد مظاہرین سڑکوں پر نکل آئے۔ مظاہرین جنگ بندی اور آزاد فلسطین کے حق میں نعرے لگا رہے تھے۔

مظاہرین میں شامل ایک نے ' ڈچ ' زبان میں لکھے ' فوری جنگ بندی ' پوسٹر کو اٹھا رکھا تھا اور کہہ رہا تھا ' غزہ کی پٹی پر اس وقت جو کچھ ہورہا ہے بہت تباہ کن ہو رہا ہے۔'

مظاہرین کے ہاتھوں میں کئی پوسٹروں پر تحریر تھا فلسطینیوں کی ' نسل کشی بند کرو، اسرائیلی وزیر اعظم کو جنگی جرائم کے باعث گرفتار کرو، فلسطینیوں کا انسانی حقوق دو۔'

11 نومبر 2023 کو برسلز، بیلجیئم میں اسرائیل اور فلسطینی اسلامی گروپ حماس کے درمیان تنازعہ جاری رہنے کے دوران لوگ غزہ میں فلسطینیوں کی حمایت میں احتجاج میں حصہ لے رہے ہیں۔

واضح رہے برسلز یورپی یونین کی سیاسی ، سفارتی سرگرمیوں کا اہم ترین مرکز ہے اور یورپی یونین امریکی قیادت میں تقریباً وہی کچھ کر رہی ہے جو اسرائیل کر رہا ہے یا چاہتا ہے۔

برسلز میں مظاہرین کا اتنی بڑی تعداد میں اسرائیل کے خلاف سڑکوں پر نکل آنا یورپی حکومتوں کی پالیسیوں کے بارے میں بھی اہم ہے۔

مظاہرین میں سے ایک نے بات کرتے ہوئے کہا ' یہ ضروری ہے کہ ہماری بات بھی سنی جائے۔ ہم اس طرح انسانوں پر بمباری اور ان کا قتل قبول نہیں کر سکتے۔ '

ادھر برطانیہ میں بھی ہفتے کے روز ایک لاکھ سے زائد مظاہرین نے حکومت کے تمام تر حربوں کے باوجود اسرائیل اور اس کے اقدامات کے خلاف احتجاج کیا ۔

دو روز قبل برطانیہ کی ایک اسلحہ ساز فیکٹری کے باہر بھی احتجاجی مظاہرین بھی پوسٹر لے کر پہنچ گئے کہ اسرائیل کو اسلحہ دینا بند کرو۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں