اسرائیل انسانی حقوق اور بین الاقوامی قوانین کا احترام کرنے والا ملک ہے: جرمن چانسلر

صدر ایردوآن کا اسرائیل کو فاشسٹ ملک کہنا مضحکہ خیز ہے، اولف شولز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جرمنی کے چانسلر اولف شولز نے کہا ہے کہ اسرائیل ایک جمہوری اور انسانی حقوق پر یقین رکھنے والا اور بین الاقوامی قوانین کی پابندی کرنے والا ملک ہے۔ اسے فاشسٹ ریاست کہنا مضحکہ خیز بات ہے۔

چانسلر شولز نے اپنی پریس کانفرنس کے دوران یہ بات ترکیہ کے صدر رجب طیب ایردوآن کے اسرائیل کے بارے میں ایک حالیہ بیان سے متعلق سوال کا جواب دیتے ہوئے کہی ۔ جس میں ایردوآن نے اسرائیل کو ایک فاشسٹ ریاست قرار دیا تھا ۔

ایردوآن اسرائیل کے بارے میں یہ بات کرتے ہوئے غزہ میں اسرائیلی فوج کی بمباری سے تقریباً پانچ ہزار بچوں سمیت بارہ ہزار کے قریبی فلسطینیوں کی ہلاکت اور ہسپتالوں پر اسرائیلی حملوں کا حوالہ دے رہے تھے۔ ایردوآن نے کہا تھا کہ 'اسرائیل کی قانونی حیثیت پر اس کے فاشزم کی وجہ سے سوال کھڑے ہیں۔

واضح رہے ایردوآن جرمنی کے دورے پر آرہے ہیں جہاں ان کی چانسلر شولز کے علاوہ جرمن صدر کے ساتھ بھی ملاقات کریں گے۔

2020 کے بعد ایردوآن کا جرمنی کا یہ پہلا دورہ ہو گا۔ تاہم ان کے دورے سے پہلے ہی اس طرح کے بیانات نے تنازعہ کھڑا کر دیا ہے۔ کیونکہ وہ اسرائیل کو فاشسٹ ریاست کہہ رہے ہیں اور حماس کو حریت پسند قرار دے رہے ہیں کہ حماس اپنی سرزمین کو اسرائیلی قبضے سے چھڑانے کے لیے لڑ رہی ہے۔

سات اکتوبر سے شروع ہونےوالی اسرائیل حماس جنگ کے بعد سے ایردوآن کی کئی دوسرے عالمی رہنماوں اور ملکوں کی طرح اسرائیل پر تنقید بڑھ گئی ہے۔ وہ اسرائیل کو جنگی جرائم کا مرتکب بھی قرار دیتے ہیں۔

ادھر صدر ایردوآن کے طے شدہ دورے کے بارے میں چانسلر شولز کے ترجمان نے یہ تسلیم کیا کہ ' ہمیشہ ایک مشکل شراکت دار رہے ہیں جن کے ساتھ ڈیل کرنا ہوتا ہے،' اس کے ساتھ ہی ترجمان نے یہ بھی زور دے کر کہا ' یہ ضروری ہے کہ اس سخت ترین وقت میں بھی مختلف امور پر آگے بڑھا جائے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں