امریکہ نے عراق میں ایران کی حمایت یافتہ گروہوں پر پابندیاں عائد کر دیں

پابندیوں میں ایران کے ساتھ اتحاد کرنے والا مسلح گروپ کتائب حزب اللہ بھی شامل ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکہ نے ایرانی حمایت یافتہ عراقی گروپ کتائب حزب اللہ اور دیگر گروپوں پر پابندیاں عائد کر دی ہیں۔ امریکہ نے کتائب حزب اللہ پر ان حملوں کی ذمہ داری عائد کی ہے جنہوں نے حال ہی میں عراق اور شام میں واشنگٹن اور اس کے شراکت داروں کو نشانہ بنایا تھا۔ 17 اکتوبر کے بعد سے امریکی افواج اور اس کی قیادت میں اتحادی افواج پر عراق اور شام میں کم از کم 58 حملے کیے گئے ہیں۔

اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ کے پس منظر میں خطے میں کشیدگی بڑھ گئی ہے۔ ان حملوں میں کم از کم 59 امریکی فوجی معمولی زخمی ہوئے ہیں۔ یہ سب امریکی فوجی ڈیوٹی پر واپس آگئے ہیں۔

خدشہ ہے کہ اسرائیل اور حماس کے درمیان تنازع مشرق وسطیٰ کے باقی حصوں تک پھیل جائے گا اور پورے خطے میں امریکی افواج کے اڈوں کو نشانہ بنایا جائے گا۔ امریکی محکمہ خزانہ نے جمعہ کے روز ایک بیان میں کہا کہ اس نے کتائب حزب اللہ سے وابستہ 6 افراد پر پابندیاں عائد کی ہیں۔ کتائب حزب اللہ کو امریکہ پہلے ہی غیر ملکی دہشت گرد تنظیم قرار دے چکا ہے۔

پابندیوں کا نشانہ بننے والوں میں گروپ کے اہم فیصلہ ساز ادارے کا ایک رکن، امور خارجہ کا ایک عہدیدار اور ایک فوجی کمانڈر شامل ہے۔ ان کے متعلق محکمہ خزانہ نے کہا کہ وہ جنگجوؤں کو تربیت دینے کے لیے ایرانی پاسداران انقلاب کے ساتھ مل کر کام کر رہے ہیں۔

القدس فورس کے ایک عہدیدار پر بھی پابندی لگائی گئی ہے۔ القدس فورس ایرانی پاسداران انقلاب کی ایک شاخ ہے۔ واشنگٹن نے کہا کہ یہ عہدیدار ایران میں کتائب حزب اللہ کے جنگجوؤں کے لیے سفر اور تربیت کی سہولت فراہم کرتا ہے۔

امریکی وزیر خزانہ برائے دہشت گردی اور مالیاتی انٹیلی جنس برائن نیلسن نے ایک بیان میں کہا کہ آج کا قدم کتائب حزب اللہ اور ایران کی حمایت یافتہ دیگر تمام گروہوں کو پیغام دیتا ہے کہ امریکہ کسی بھی موقع پرست فریق کو جوابدہ ٹھہرانے کے لیے تمام دستیاب ذرائع استعمال کرے گا۔ یہ وہ گروپ ہیں جو اپنے مفادات کے لیے غزہ کی صورتحال سے فائدہ اٹھا رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم مشرق وسطیٰ میں سلامتی اور استحکام کے لیے پوری طرح پرعزم ہیں اور عدم استحکام کی سرگرمیوں کو روکنے کے لیے اپنی کوششوں میں ثابت قدم ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں