وائٹ ہاؤس کی مسک کے 'ہولناک' سام دشمن بیان کی مذمت

امریکی کمپنیوں نے ایکس پر اشتہارات روک دیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

وائٹ ہاؤس نے جمعہ کے روز ایلون مسک کی توثیق کی مذمت کی جسے اس نے ایکس پر "ہولناک" سام دشمن سازشی تھیوری کہا جبکہ بڑی امریکی کمپنیوں بشمول والٹ ڈزنی کمپنی، وارنر برادرز ڈسکوری اور این بی سی یونیورسل کی پیرنٹ کمپنی کامکاسٹ نے مسک کی سوشل میڈیا سائٹ پر اپنے اشتہارات کو روک دیا۔

مسک نے بدھ کے روز ایکس پر ایک پوسٹ سے اتفاق کیا جس میں جھوٹا دعویٰ کیا گیا تھا کہ یہودی لوگ سفید فام لوگوں کے خلاف نفرت پھیلا رہے تھے۔ مسک نے کہا کہ "عظیم تبدیلی" سازشی تھیوری کا حوالہ دینے والا صارف "اصل سچ" بول رہا تھا۔

اس سازشی تھیوری کا خیال ہے کہ یہودی اور بائیں بازو کے لوگ سفید فام آبادی کے نسلی اور ثقافتی متبادل کو غیر سفید فام تارکینِ وطن سے تبدیل کر رہے ہیں جو ایک "سفید فام نسل کشی" کا باعث بنے گا۔

وائٹ ہاؤس نے مسک پر "یہود دشمنی اور نسل پرستانہ نفرت کے قابلِ کراہت فروغ" کا الزام لگایا جو "امریکیوں کی حیثیت سے ہماری بنیادی اقدار کے خلاف ہے۔"

وائٹ ہاؤس کے ترجمان اینڈریو بیٹس نے 7 اکتوبر کو فلسطینی اسلامی گروپ حماس کے اسرائیل پر حملے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا، "ہولوکاسٹ کے بعد سے 7 اکتوبر یہودیوں کے لیے مہلک ترین دن تھا جس کے ایک ماہ بعد اس خوفانک جھوٹ کو دہرانا ناقابلِ قبول ہے۔"

ڈزنی، وارنر برادرز ڈسکوری اور کامکاسٹ کے علاوہ لائنز گیٹ انٹرٹینمنٹ اور پیراماؤنٹ گلوبل نے جمعہ کو کہا کہ وہ بھی ایکس (سابقہ ٹویٹر) پراپنے اشتہارات کو روک رہے تھے۔ ایگزیاس نے رپورٹ کیا کہ مارکیٹ ویلیو کے لحاظ سے دنیا کی سب سے بڑی کمپنی ایپل بھی اپنے اشتہارات روک لیے۔

آئی بی ایم نے جمعرات کو ایکس پر اپنے اشتہارات روک دیئے جب ایک رپورٹ میں پتا چلا کہ اس کے اشتہارات ایڈولف ہٹلر اور نازی پارٹی کو فروغ دینے والے مواد کے ساتھ لگائے گئے تھے۔ میڈیا میٹرز نے کہا کہ اسے پتا چلا کہ آئی بی ایم، ایپل، اوریکل، اور کامکاسٹ کے انفینیٹٰی کے کاروباری اشتہارات سام دشمن مواد کے ساتھ لگائے جا رہے تھے۔

جب سے مسک نے اکتوبر 2022 میں ایکس (سابقہ ٹویٹر) کو خریدا ہے، اس سائٹ سے مشتہرین بھاگ گئے ہیں اور مواد کی اعتدال پسندی کو کم کیا ہے جس کے نتیجے میں شہری حقوق کے گروپوں کے مطابق ایکس پر نفرت انگیز مواد میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے۔

جمعہ کو مسک اور ایکس کے نمائندوں نے دوبارہ ان کی پوسٹ پر تبصرہ کرنے سے انکار کردیا۔

پلیٹ فارم کا ایک اعلی درجہ جو صارفین کی فیڈز سے اشتہارات کو ہٹاتا ہے، کی تشہیر کرتے ہوئے مسک نے جمعہ کے روز ایکس پر لکھا، "بہت سے بڑے مشتہرین آپ کے آزادانہ اظہار کے حق کو سب سے زیادہ دباتے ہیں۔"

انہوں نے کہا، "پریمیئم پلس کا بھی آپ کی ٹائم لائن پر کوئی اشتہار نہیں ہے۔"

ایکس کی سی ای او لنڈا یاکارینو نے جمعرات کو کہا۔ "جب اس پلیٹ فارم کی بات آتی ہے - تو ایکس سام دشمنی اور امتیازی سلوک کا مقابلہ کرنے کی ہماری کوششوں کے بارے میں بھی بہت واضح رہا ہے۔ دنیا میں کہیں بھی اس کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے - یہ بدصورت اور غلط ہے۔ بس۔"

امریکہ اور دنیا بھر میں حالیہ برسوں میں سام دشمنی عروج پر ہے۔ سام دشمنی کے خلاف لڑنے والی ایک غیر منافع بخش تنظیم اینٹی ڈیفیمیشن لیگ کے مطابق گذشتہ مہینے کے حملے کے نتیجے میں اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ شروع ہونے کے بعد ریاست ہائے متحدہ امریکہ میں سام دشمنی کے واقعات میں سال کے ابتدائی عرصے سے تقریباً 400 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

الیکٹرک گاڑیاں بنانے والی کمپنی ٹیسلا کے چیف ایگزیکٹو اور راکٹ کمپنی اسپیس ایکس کے بانی مسک نے بغیر کسی ثبوت کے مشتہرین میں مسلسل کمی کا الزام اینٹی ڈیفیمیشن لیگ کو دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں