فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیل کے پاس جوہری ہتھیارہے ؟ سلامتی کونسل اورجوہری توانائی کے ادارے سے جواب لیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ترکیہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اور انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی سے اسرائیل کے پاس جوہری ہتھیاروں کی تصدیق کے لیے رجوع کرے گا۔ آیا اسرائیل جوہری ہتھیار رکھتا ہے یا نہیں؟

یہ بات ترکیہ کے صدر رجب طیب ایردوآن نے بدھ کے روز کہی ہے۔ ان کا کہنا تھا ترکیہ جوہری ہتھیاروں اور بموں کے معاملے کو ایسے نہیں جانے دے گا جس کی موجودگی سے اسرائیلی وزیروں نے انکار کیا ہے۔

ایردوآن نے کہا ' ترکیہ اسرائیل کو اجازت نہیں دے گا کہ وہ جوہری بم رکھے۔ ہم اسے بتائیں گے کہ تمہارے جوہری بم ہے یا نہیں ہے۔ لیکن ہم کہتے ہیں کہ اسرائیل تمہارے پاس جوہری بم ہے۔ '

صدر ایردوآن نے کہا ' ہم سلامتی کونسل کے سامنے بھی یہ ایشو اٹھانے کا انیشیٹو لییں گے اور انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی سے بھی رابطہ کریں گے کہ اسرائیلی جوہری ترکیہ سمیت پورے علاقے کے لیے خطرہ ہو سکتا ہے۔

واضح رہے اسرائیلی وزیر برائے ورثہ آمہائی ایلیاہو نے اسی ماہ کے شروع میں غزہ میں اسرائیل کے پاس جوہری آپشن استعمال کرنے کی دھمکی دی تھی۔

لیکن اس وزیر کی اس کھلی جوہری دھمکی کے باجود کسی عالمی طاقت اور عالمی ادارے نے نوٹس نہیں لیا اور نہ ہی اس سلسلے میں اسرائیل کی طرف سے کوئی تردید کی گئی کہ اسرائیل کے پاس جوہری بم ہیں یا نہیں اور اس کے سامنے کوئی آپشن زیر غور ہے کہ نہیں۔

ترکیہ کے صدر ایردوآن اسرائیل کو ایک دہشت گرد ملک قرار دیتے رہتے ہیں، ان کا موقف ہے کہ ہمیں اب ہمیشہ کے لیے جان لینا چاہیے کہ اسرائیل دہشت گرد ملک ہے اس کے لیے ہچکچاہٹ نہیں ہونی چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں