دورۂ اسرائیل کے موقع پر غزہ کے وقفے کو بڑھانے پر توجہ دیں گے: امریکی وزیرِ خارجہ بلنک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکی وزیرِ خارجہ انٹونی بلنکن نے بدھ کو کہا کہ وہ اسرائیل کے آئندہ دورے پر غزہ میں لڑائی کے وقفے کو طول دینے کے لیے کام کریں گے۔

بلنکن نے برسلز میں نیٹو اجلاس کے بعد کہا، "اگلے دو دنوں کو دیکھتے ہوئے ہم اس وقفے کو بڑھانے کے لیے جو کچھ ممکن ہو، کرنے پر توجہ مرکوز کریں گے تاکہ ہم مزید یرغمالیوں کو رہائی اور مزید انسانی امداد فراہم کرتے رہیں۔"

"ہم تؤقف میں توسیع دیکھنا چاہتے ہیں کیونکہ اس کی بدولت -- اولین اور اہم ترین بات یہ ہے کہ یرغمالی رہا ہو کر گھر آ رہے اور اپنے اہل خانہ سے دوبارہ مل رہے ہیں۔"

اعلیٰ امریکی سفارت کار نے کہا ان کا خیال ہے کہ توسیع اسرائیل کے مفاد میں بھی ہے۔

انہوں نے کہا۔ "وہ اپنے لوگوں کو واپس لانے پر بھی پوری توجہ مرکوز کر رہے ہیں اس لیے ہم اس پر کام کر رہے ہیں۔"

بلنکن جنگ کے دوران شرقِ اوسط کا یہ تیسرا دورہ کریں گے جہاں وہ تل ابیب میں اسرائیلی وزیرِ اعظم بنجمن نیتن یاہو اور رام اللہ میں فلسطینی صدر محمود عباس سے ملاقات کریں گے۔

حماس کے مہلک حملوں سے پیدا ہونے والے تنازعہ میں غزہ میں موجودہ جنگ بندی چھ دن کے وقفے کے بعد جمعرات کے اوائل میں ختم ہونے والی ہے جو علاقے میں تباہ کن اسرائیلی فوجی کارروائی کا سبب بنی تھی۔

7 اکتوبر کو حماس کے مزاحمت کاروں نے سرحد پار سے اسرائیل میں داخل ہو کر 1,200 افراد کو ہلاک کر دیا جن میں زیادہ تر عام شہری تھے اور تقریباً 240 کو اغوا کر لیا۔

حماس کے حکام کے مطابق غزہ میں اسرائیل کی فضائی اور زمینی بمباری مہم کے نتیجے میں تقریباً 15,000 افراد ہلاک ہوئے۔ یہ بھی زیادہ تر عام شہری تھے اور علاقے کے شمال کے بڑے حصے کو ملبے کے ڈھیروں میں تبدیل کر دیا۔

مزاحمت کار گروپ کے ایک قریبی ذریعے نے بدھ کو بتایا، حماس جنگ بندی میں چار دن کی توسیع کرنے اور فلسطینی قیدیوں کے بدلے مزید اسرائیلی یرغمالیوں کو رہا کرنے کے لیے تیار ہے جبکہ ثالثین تنازع میں دیرپا وقفے کی کوششوں میں ہیں۔

تنازعات کے ثالث قطر نے کہا ہے کہ مذاکرات کار "پائیدار" جنگ بندی کے لیے کام کر رہے ہیں کیونکہ معاہدے کے تحت 60 اسرائیلی یرغمالی اور 180 فلسطینی قیدی پہلے ہی رہا ہو چکے ہیں اور بدھ کے روز مزید افراد کی رہائی ہونا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں