بیجنگ کا اسرائیل اور حماس سے "پائیدار انسانی جنگ بندی" کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

چین کی وزارت خارجہ نے جمعرات کو شائع ہونے والی ایک دستاویز میں مطالبہ کیا ہے کہ اسرائیل اور حماس کے درمیان فوری طور پر "پائیدار انسانی جنگ بندی" قائم کی جائے۔

وزارت خارجہ نے دستاویز میں کہا ہے کہ "متحارب فریقین کو فوری طور پر ایک مستقل اور پائیدار انسانی جنگ بندی قائم کرنی چاہیے"۔چین کی طرف سے انہوں نے ایک جامع جنگ بندی اور لڑائی کے خاتمے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

واضح پیغام

اپنی دستاویز میں چینی وزارت خارجہ نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل پر زور دیا کہ وہ ایک "واضح پیغام" بھیجے جس میں "فلسطینی شہری آبادی کی جبری منتقلی" کو مسترد کرنے کی تصدیق کی جائے اور ساتھ ہی "تمام زیر حراست شہریوں اور یرغمالیوں کی رہائی" کا مطالبہ کیا جائے۔

وزارت خارجہ نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل سےمطالبہ کیا کہ "تنازع کے فریقین سے تحمل کا مظاہرہ کرنے کا مطالبہ کریں تاکہ تنازع کو پھیلنے سے روکا جا سکے اور مشرق وسطیٰ میں امن و استحکام کی حمایت کی جا سکے"۔

مصری وزیرخارجہ اپنے چینی ہم منصب کے ساتھ
مصری وزیرخارجہ اپنے چینی ہم منصب کے ساتھ

دو ریاستی حل

گذشتہ ہفتےچین نے اسرائیل اور حماس کے درمیان جمعے کی صبح سے شروع ہونے والی اس عارضی جنگ بندی کا خیرمقدم کیا تھا جس میں بعد ازاں دو دن کی توسیع کی گئی تھی۔

چین کو تاریخی طور پر مسئلہ فلسطین کا ہمدرد اور دو ریاستی حل کی بنیاد پر اسرائیل فلسطین تنازعے کے حل کا حامی سمجھا جاتا ہے۔

چینی صدر شی جن پنگ نے اس تنازعے کو حل کرنے کے لیے "بین الاقوامی امن کانفرنس" کا مطالبہ کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں