غزہ کی امداد لاکھوں افراد کی ضروریات پوری کرنےکے لیے ناکافی ہے: اقوام متحدہ کا انتباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

اقوامِ متحدہ نے منگل کے روز غزہ میں امداد کی ترسیل میں اضافے کا خیرمقدم کیا جو عارضی جنگ بندی کی بدولت ممکن ہوا لیکن خبردار کیا کہ فلسطینی سرزمین کی وسیع ضروریات کی تکمیل کو شروع کرنے کے لیے بھی یہ کافی نہیں تھا۔

اقوام متحدہ کے بچوں کے ادارے یونیسیف نے کہا ہے کہ شمالی غزہ کی پٹی میں امداد کی روانی – 7 اکتوبر کو اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ شروع ہونے کے بعد سے امداد کی سب سے بڑی تعداد – ایک "صحیح آغاز" تھا۔

ترجمان جیمز ایلڈر نے غزہ سے ویڈیو لنک کے ذریعے جنیوا میں ایک پریس بریفنگ میں بتایا، "(یہ) یقیناً صحیح قسم کی امداد ہے - ایندھن، ادویات، خوراک، گرمائش۔"

لیکن انہوں نے خبردار کیا کہ 20 لاکھ سے زیادہ آبادی والے محصور انکلیو میں ضروریات اتنی وسیع ہیں کہ "یہ تمام امداد ایک ابتدائی ترجیحی جائزہ ہے۔ یہ ابتدائی ترجیحی جائزے کے لیے بھی ناکافی ہے۔"

جب ہر اس شخص کے علاج کے لیے وسائل ناکافی ہوں جسے اس کی ضرورت ہو تو ہسپتالوں اور امدادی تنظیموں کو ٹرائیج یعنی ایک ابتدائی ترجیحی جائزہ لینے پر مجبور کیا جاتا ہے – جس کا مطلب ہے کہ انتہائی ضروری کیسز یا ان لوگوں کو ترجیح دینا جن کے زندہ بچ جانے کا سب سے زیادہ امکان ہو اور دوسروں کو چھوڑ دینا۔

 حماس اور اسرائیل کے درمیان عارضی جنگ بندی کے دوران 28 نومبر 2023 کو اسرائیل کی نیتسانا گذرگاہ سے انسانی امداد کے ٹرک غزہ کے لیے روانہ ہو رہے ہیں۔ (رائٹرز)  ایلڈر نے کہا۔ "امداد کو کئی گنا بڑھانے کی ضرورت ہے۔ اس وقت یہاں ہر چیز کے لیے ہنگامی نگہداشت ضروری ہے۔"
حماس اور اسرائیل کے درمیان عارضی جنگ بندی کے دوران 28 نومبر 2023 کو اسرائیل کی نیتسانا گذرگاہ سے انسانی امداد کے ٹرک غزہ کے لیے روانہ ہو رہے ہیں۔ (رائٹرز) ایلڈر نے کہا۔ "امداد کو کئی گنا بڑھانے کی ضرورت ہے۔ اس وقت یہاں ہر چیز کے لیے ہنگامی نگہداشت ضروری ہے۔"

ایلڈر نے کہا۔ "امداد کو کئی گنا بڑھانے کی ضرورت ہے۔ اس وقت یہاں ہر چیز کے لیے ہنگامی نگہداشت ضروری ہے۔"

عالمی ادارۂ صحت کی مارگریٹ ہیرس نے اس بات سے اتفاق کیا۔

ڈبلیو ایچ او کی ترجمان نے بریفنگ میں بتایا، "ضروریات بہت زیادہ ہیں۔ ہم جتنی امداد حاصل کرنے میں کامیاب رہے ہیں وہ اب بھی ایک قطرے سے زیادہ نہیں۔"

ان کے تبصرے ایسے وقت میں سامنے آئے ہیں جب اسرائیل اور فلسطینی مزاحمتی گروپ حماس نے ابتدائی چار روزہ جنگ بندی میں دو دن کی توسیع کا آغاز کیا ہے جس کے تحت اسرائیلی جیلوں سے فلسطینی قیدیوں کی رہائی کے بدلے میں اسرائیلی یرغمالیوں کو غزہ سے رہا کرنا ممکن ہوا ہے۔

جنگ بندی سے لڑائی رک گئی جو اسرائیل کی جانب سے غزہ میں بڑے پیمانے پر فضائی اور زمینی کارروائی کرنے کے بعد شروع ہوئی تھی جس میں کم از کم 15,000 فلسطینی ہلاک ہو گئے۔ حماس کے جنگجو اسرائیل کی سرحدوں میں داخل ہوئے جس کے نتیجے میں 1,200 افراد ہلاک ہوئے۔ تقریباً 240 افراد کو یرغمال بھی بنایا گیا تھا جس کے بدلے میں اسرائیل نے فوجی کارروائی کی۔

'دل دوز'

ایلڈر نے کہا، "جنگ بندی نے " نازک حالات میں امداد حاصل کرنے اور لوگوں کے اپنے عزیزوں کی تلاش کا دل دوز کام کرنے کے لیے چند لمحوں کی مہلت دی ہے۔"

انہوں نے کہا، "لڑائی میں وقفے کو طول دینے اور مستقل جنگ بندی میں بدلنے کے لیے یہ ضروری تھا۔"

 13 اکتوبر 2023 کو جنوبی غزہ کی پٹی میں خان یونس میں بین الاقوامی تنظیموں کے عملے کے اہلِ خانہ اپنا سامان اقوام متحدہ کے ایک مرکز میں پناہ گاہ میں لے جا رہے ہیں جب یو این آر ڈبلیو اے نے کہا کہ اس نے اپنا مرکزی آپریشن سنٹر غزہ کی پٹی کے جنوب میں منتقل کر دیا تھا۔ (فائل فوٹو: رائٹرز)
13 اکتوبر 2023 کو جنوبی غزہ کی پٹی میں خان یونس میں بین الاقوامی تنظیموں کے عملے کے اہلِ خانہ اپنا سامان اقوام متحدہ کے ایک مرکز میں پناہ گاہ میں لے جا رہے ہیں جب یو این آر ڈبلیو اے نے کہا کہ اس نے اپنا مرکزی آپریشن سنٹر غزہ کی پٹی کے جنوب میں منتقل کر دیا تھا۔ (فائل فوٹو: رائٹرز)

"یہ سوچنا بہت ظالمانہ اور سردمہر ہوگا کہ ہم پلٹ کر گھروں اور بچوں اور خاندانوں کی زندگیوں کو دوبارہ تباہ کرنا شروع کر سکتے ہیں۔"

اس کے ساتھ ہی لڑائی میں محض ایک عارضی وقفے کے دوران غزہ میں صفائی اور سیوریج ٹریٹمنٹ پلانٹس جیسی چیزوں کے دوبارہ ٹھیک طریقے سے کام کرنے کا "کوئی راستہ نہیں"۔

ایلڈر نے کہا، اگر لڑائی دوبارہ شروع ہوتی ہے تو غزہ میں "بچوں کا بڑے پیمانے پر قتل" جاری رہے گا، ایک ایسے وقت میں جب وہاں کے شہری پہلے سے بھی زیادہ غیر محفوظ ہیں - کئی لوگ سرد موسم، غذائی قلت، صاف پانی کی کمی اور بیماریوں کے خطرے کے ساتھ باہر رہتے ہیں۔

غزہ پر اسرائیلی بمباری دوبارہ شروع کرنے کی اجازت دینے کے بارے میں انہوں نے کہا، یہ "ہر ایک کے ضمیر پر سیاہ داغ ہو گا"۔

ڈبلیو ایچ او نے کہا کہ وہ گنجان آباد علاقے میں کچھ متعدی بیماریوں میں "بڑے پیمانے پر اضافہ" دیکھ رہا ہے - بشمول چھوٹے بچوں میں 45 گنا زیادہ اسہال کے معاملات - جب کہ زیادہ تر ہسپتال کام کرنے سے قاصر تھے اور صحت کی نگہداشت کا نظام انحطاط پذیر تھا۔

جب تک صحت کا نظام درست نہ ہو جائے اور غزہ کو خوراک، پانی اور ادویات جیسی بنیادی چیزیں قابلِ اعتماد طریقے سے فراہم نہ کی جائیں، ہیرس نے خبردار کیا کہ "آخرِکار ہم بمباری سے زیادہ لوگوں کو بیماری سے مرتے ہوئے دیکھیں گے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں