شام میں انقلابی گارڈز کے دو افسروں کے قتل میں اسرائیل ملوث ہے: ایرانی میڈیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ایرانی میڈیا نے اعلان کیا ہے کہ ایرانی انقلابی گارڈز کے افسروں محمد علی عطائی شورچہ اور پناہ تقی زادہ کو اس وقت مار دیا گیا ہے جب وہ ’’ سیرین اسلامک رزِسٹنس فرنٹ‘‘ میں مشاورتی مشن انجام دے رہے تھے۔

ایرانی نیوز ایجنسی ’’ تسنیم‘‘ کے مطابق پاسداران انقلاب نے اسرائیل پر ان کے قتل کا الزام لگایا۔ بیان میں دونوں ایرانی افسران کے قتل کے حالات یا تاریخ کا ذکر نہیں کیا گیا۔

سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس نے ہفتے کو اطلاع دی کہ شام پر اسرائیلی فضائی حملوں میں لبنانی حزب اللہ سے تعلق رکھنے والے دو ارکان ہلاک اور سات دیگر ارکان زخمی ہو گئے۔ آبزرویٹری نے کہا کہ چھاپوں میں دمشق کے دیہی علاقوں میں حزب اللہ کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا۔

قبل ازیں شام کی وزارت دفاع نے اعلان کیا تھا کہ اسرائیلی فوج نے ہفتے کی صبح دمشق کے نواح میں حملے کئے ہیں۔ ان حملوں میں فوری طور پر کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں دی گئی۔

شام کی وزارت دفاع نے ایک بیان میں کہا کہ ہفتہ کی صبح لگ بھگ ایک بج کر 35 منٹ پر اسرائیل نے مقبوضہ شام کے گولان کی سمت سے فضائی حملہ کیا۔ اس میں دمشق شہر کے آس پاس کے بعض مقامات کو نشانہ بنایا گیا۔ عینی شاہدین نے بھی بتایا کہ انہوں نے دھماکوں کی آوازیں سنی ہیں۔

شام میں ہلاک ہونے والے دو اہلکار ۔ قدس فورس بھی درج ہے
شام میں ہلاک ہونے والے دو اہلکار ۔ قدس فورس بھی درج ہے

سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کے ڈائریکٹر رامی عبدالرحمن نے ایجنسی فرانس پریس کو بتایا کہ اسرائیلی فضائیہ نے دمشق کے جنوب میں سیدہ زینب رضی اللہ عنھا کالونی کے پڑوس میں حزب اللہ کے ٹھکانوں پر بمباری کی۔ یاد رہے 2011 میں تنازع کے آغاز کے بعد سے اسرائیل نے شام میں سینکڑوں فضائی حملے کئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں