غزہ میں اسرائیلی حملوں کی ہولناکی سے حیران ہیں: امریکی اہلکار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

گذشتہ جمعے کو اسرائیل اور حماس کے درمیان عارضی جنگ بندی کے خاتمے کے بعد سے فلسطینی شہریوں کے جانی نقصان سے بچنے کے لیے مسلسل امریکی دباؤ کے باوجود غزہ کی پٹی پر اسرائیلی حملے رکے نہیں ہیں۔

اسرائیلی فوج مسلسل عام شہریوں کو حملوں کا نشانہ بنا رہی ہے جس کے نتیجے میں عام شہریوں کی اموات ہو رہی ہیں۔

ایک اعلیٰ امریکی فوجی اہلکار نے تصدیق کی ہے کہ وہ اسرائیل کی نئی مہم کی ’وحشت‘ سے حیران ہیں۔

انہوں نے پیر کو ’این بی سی‘ نیوز کو دیے گئے بیانات میں وضاحت کی کہ گذشتہ دنوں فلسطینی غزہ کی پٹی کے مختلف علاقوں پر اسرائیلی حملوں کی تجدید نے انہیں حیران کر دیا۔

شمال اور جنوب میں یہ اسرائیلی حملے اور زمینی دراندازی حال ہی میں شہریوں کے تحفظ کے لیے مزید کوششیں کرنے کے لیے امریکی اپیلوں میں اضافے کے باوجود جاری ہے اور اس کارروائی میں بڑی تعداد میں عام شہریوں کا جانی نقصان ہو رہا ہے۔ اسرائیلی بمباری میں شہداء کی تعداد پندرہ ہزار سے تجاوز کرگئی ہے۔

یہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں آئی ہے جب غزہ میں زیر حراست اسرائیلی قیدیوں کے اہل خانہ نے لڑائی دوبارہ شروع ہونے کے بعد اپنے رشتہ داروں کے لیے اپنی تشویش کا اظہار کیا۔

شمالی اور جنوبی غزہ کو نشانہ بنانے والے اسرائیلی بمباری کے نتیجے میں کل سوموار کو مزید 90 افراد مارے گئے۔

1.9 ملین بے گھر ہوئے

اقوام متحدہ نےغزہ کی پٹی میں مسلسل اسرائیلی بمباری کے باعث المناک حالات کے بارے میں خبردار کیا ہے۔ اس نے خبردار کیا کہ جنوب کی طرف بے گھر ہونے والے لاکھوں افراد ان سہولیات میں پناہ لے رہے ہیں جن پر بمباری بھی کی جا رہی ہے۔

غزہ کے علاقے میں اسرائیلی فوج: رائیٹرز
غزہ کے علاقے میں اسرائیلی فوج: رائیٹرز

کل اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی برائے فلسطینی پناہ گزین (UNRWA) نے اعلان کیا ہے کہ غزہ پر جنگ شروع ہونے کے بعد سے تقریباً 1.9 ملین افراد یا غزہ کی آبادی کا 80 فیصد سے زیادہ بے گھر ہو چکے ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ دس لاکھ فلسطینی وسطی غزہ، خان یونس اور جنوبی غزہ کی پٹی میں رفح میں اس کی 99 تنصیبات میں پناہ لیے ہوئے ہیں۔

دوسری طرف غزہ میں ’اونروا‘ کے ڈائریکٹر تھامس وائٹ نے "ایکس" پلیٹ فارم پر کہا کہ "ہم داخلی نقل مکانی کی ایک اور لہر دیکھ رہے ہیں اور انسانی صورت حال دن بہ دن بگڑتی جا رہی ہے"۔ انہوں نے مزید کہا کہ "جنوب کی طرف رفح کی طرف جانے والی سڑکوں پر گاڑیوں اور جانور جوت کر بنائی جانے والی گاڑیوں کا ہجوم ہے جو بے گھر افراد اور ان کے سادہ سامان سے لدی ہوئی ہیں"۔

اسرائیلی فوج نے خان یونس شہر اور اس کے گرد ونواح کے رہائشیوں سے کہا تھا کہ وہ جنوب کی طرف اور مصر کی سرحد سے ملحقہ رفح کی طرف نکل جائیں کیونکہ وہ غزہ کی پٹی کے جنوب میں زبردست حملہ کرنے کی تیاری کر رہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں