ملالہ یوسفزئی کی منڈیلا لیکچر میں خواتین کے ساتھ طالبان کے سلوک کو نسل پرستی سے تشبیہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امن کی نوبیل انعام یافتہ ملالہ یوسفزئی نے منگل کو نیلسن منڈیلا فاؤنڈیشن کے زیرِ اہتمام جنوبی افریقہ میں ایک لیکچر میں طالبان کی جانب سے افغانستان میں خواتین پر پابندیوں کو اس سلوک سے تشبیہ دی جو نسلی امتیاز کے تحت سیاہ فام لوگوں کے ساتھ برتا جاتا تھا۔

ملالہ یوسف زئی 15 سال کی عمر میں طالبان کے قاتلانہ حملے میں اس وقت سر میں گولی لگنے کے بعد زندہ بچ گئی تھیں جب انہوں نے اپنے آبائی وطن پاکستان میں پاکستانی طالبان کے اقدام کے خلاف مہم چلائی جو لڑکیوں کو تعلیم سے روکتے تھے۔

2014 میں امن کا نوبیل انعام جیتنے کے بعد سے ملالہ یوسفزئی جو اب 26 سال کی ہیں، جبر و استبداد کا سامنا کرنے والی خواتین کی عزم و ہمت کی عالمی علامت بن چکی ہیں۔

یوسفزئی نے جوہانسبرگ میں نیلسن منڈیلا کے 21ویں سالانہ لیکچر کے دوران کہا۔ "اگر آپ افغانستان کی ایک لڑکی ہیں تو طالبان نے آپ کے مستقبل کا فیصلہ کر لیا ہے۔ آپ سیکنڈری اسکول یا یونیورسٹی نہیں جا سکتیں۔ آپ کو کوئی کھلی لائبریری نہیں مل سکتی جہاں آپ پڑھ سکیں۔ آپ کو اپنی مائیں اور بڑی بہنیں قیدی اور مجبور نظر آتی ہیں۔"

یوسفزئی نے کہا کہ طالبان کی کارروائیوں کو "جنسی عصبیت" سمجھا جانا چاہیے اور یہ کہ انہوں نے "عملاً لڑکی ہونے کو غیر قانونی بنا دیا ہے۔"

انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی عناصر کو طالبان کے ساتھ تعلقات کو معمول پر نہیں لانا چاہیے جو 2021 میں افغانستان میں اقتدار میں واپس آئے جب امریکہ کی قیادت میں افواج 20 سالہ جنگ کے بعد افغانستان سے واپس لوٹ گئیں۔

طالبان کے ترجمان نے یوسف زئی کے خیالات پر تبصرہ کرنے کی درخواست کا فوری طور پر جواب نہیں دیا۔

اقتدار میں واپسی کے بعد طالبان نے اکثر افغان خواتین عملے کو امدادی ایجنسیوں میں کام کرنے سے بھی روک دیا ہے، بیوٹی سیلون بند کر دیے ہیں، خواتین کو پارکوں میں جانے سے روک دیا ہے اور مرد سرپرست کی غیر موجودگی میں ان کے سفر پر پابندی لگا دی ہے۔

طالبان کہتے ہیں کہ وہ اسلامی قانون اور افغان رسم و رواج کی تشریح کے مطابق خواتین کے حقوق کا احترام کرتے ہیں اور یہ کہ حکام لڑکیوں کے ہائی اسکول کھولنے کے منصوبوں پر کام کر رہے ہیں لیکن 18 ماہ گذرنے کے بعد بھی انہوں نے کوئی ٹائم فریم فراہم نہیں کیا۔

لیکچر کے بعد ایک انٹرویو میں یوسفزئی نے کہا کہ انہیں خدشہ ہے کہ طالبان لڑکوں سے بھی سائنس اور تنقیدی سوچ چھین لیں گے۔

انہوں نے کہا، "بین الاقوامی برادری کے لیے یہ بہت اہم ہے کہ وہ نہ صرف لڑکیوں کی تعلیم تک رسائی کے تحفظ کے لیے قدم بڑھائے بلکہ اس بات کو بھی یقینی بنائے کہ یہ معیاری تعلیم ہو، یہ کوئی تعصب نہیں۔"

غزہ میں جنگ کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ فوری جنگ بندی دیکھنا چاہتی ہیں اور یہ کہ بچے اسکول اور اپنی معمول کی زندگیوں میں واپس آنے کے قابل ہو جائیں۔

انہوں نے مزید کہا: "ہم جنگیں دیکھ رہے ہیں بالخصوص غزہ میں ہونے والی بمباری جس نے بچوں سے معمول کی زندگی چھین لی ہے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں