’سعودی عرب نے پناہ گزینوں پر 18 ارب 57 ملین ڈالر خرچ کیے‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے شاہ سلمان مرکز برائے امداد وانسانی خدمات ڈاکٹر عبداللہ الربیعہ نے کہا ہے کہ ’سعودی عرب پناہ گزینوں پر 18 ارب 57 ملین ڈالر سے زیاد ہ خرچ چکا ہے۔

مملکت کی سرکاری خبر رساں ایجنسی ’’ایس پی اے‘‘ کے مطابق جنیوا میں عالمی پناہ گزین فورم سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا’ آج ہم غیر معمولی حالات میں جمع ہو رہے ہیں۔ ہمیں بڑے چیلنجوں کا سامنا ہے۔ انسانی المیے بڑھ رہے ہیں‘۔

ان کا کہنا تھا ’سعودی عرب بحرانوں اور تنازعات کو کنٹرول کرنے کے لیے عالمی برادری کے ساتھ مل کر کوشیشیں اور دنیا کے مختلف علاقوں میں متاثرین کی مدد کے لیے آگے بڑھ رہا ہے۔

’مملکت کو اپنے انسانی کردار کا احساس ہے۔ اسی لیے پناہ گزینوں اور ان کے میزبان ملکوں کے مسائل کے حل میں حصہ لے رہا ہے‘۔

انہوں نے بتایا کہ’ سعودی عرب نے گذشتہ برسوں کے دوران ایک ارب 150 ملین ڈالر پناہ گزینوں کے انسانی مسائل پر خرچ کیے‘۔

’سعودی قیادت کی ہدایت پر مملکت کے اندر پناہ گزینوں پر 18 ارب 57 ملین ڈالر خرچ کیے۔ مملکت میں پناہ گزینوں کا تناسب مملکت کی آبادی کا 5.5 فیصد تک پہنچ گیا ہے‘۔

ڈاکٹر الربیعہ نے کہا کہ ’سعودی عرب اپنے یہاں 1.07ملین پناہ گزینوں کو علاج اور تعلیم کی سہولتیں مفت فراہم کررہا ہے۔ پناہ گزینوں کو معاشرے کا حصہ بنانے کی پالیسی پر گامزن ہیں‘۔

غزہ متاثرین کے حوالے سے انہوں نے بتایا’ شاہ سلمان مرکز بین الاقوامی اور مقامی تنظیموں کی شراکت سے مختلف شعبوں میں انسانیت نواز منصوبے نافذ کر رہا ہے‘۔

ان کا کہنا تھا ’170 ملین ڈالر کی لاگت سے مختلف منصوبے نافذ کیے گئے۔ ان میں 40 ملین ڈالر غزہ میں نقل مکانی کرنے والوں پر خرچ کیے گئے جبکہ 10 ملین ڈالر عالمی اسلامی فنڈ کو دیے گئے ہیں‘۔

انہوں نے مزید کہا’ سعودی عرب پناہ گزینوں اور اندرون ملک نقل مکانی کرنے والوں کی مدد کا سلسلہ جاری رکھے گا۔ آئندہ دو برس کے دوران انسانیت نواز منصوبوں کے کل بجٹ کا سات فیصد پناہ گزینوں کے لیے ہو گا‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں