کلاس میں اسرائیلی پرچم پر اعتراض، امریکی استاد کی طالبہ کو سر قلم کرنے کی دھمکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جارجیا میں ایک مڈل اسکول کے استاد کو اس وقت گرفتار کیا گیا، جب گواہان نے تفتیش کار کو بتایا کہ اس نے ایک طالبہ کا سر قلم کر دینے کی دھمکی دی جس نے اپنے کلاس روم میں اسرائیلی پرچم پر اعتراض کیا۔

ہیوسٹن کاؤنٹی جیل کے ریکارڈ کے مطابق وارنر رابنز مڈل اسکول کے ایک استاد بینجمن ریس کو 8 دسمبر کو دہشت گردانہ دھمکیاں دینے اور بچوں پر ظلم کے الزام میں حراست میں لیا گیا تھا۔

اسے دو دن بعد بانڈ پر رہا کر دیا گیا۔

اس کے اسکول کے ای میل ایڈریس پر ایک پیغام کا فوری طور جواب نہ ملا۔ 51 سالہ ریس کے لیے ممکنہ فون لسٹنگ پر کالیں بھی فوری طور پر واپس نہیں آئیں یا جواب نہیں دیا گیا۔

ہیوسٹن کاؤنٹی ڈسٹرکٹ کے اٹارنی ولیم کینڈل نے کہا کہ ریس نے عوامی محافظ کی درخواست کی تھی لیکن ان کے لیے کوئی وکیل درج نہیں تھا۔

طالبہ نے شیرف کے تفتیش کار کو بتایا کہ وہ پرچم دیکھنے کے بعد 7 دسمبر کو ریس کے کلاس روم میں گئیں اور کہا کہ انہیں یہ ناگوار معلوم ہوا کیونکہ اسرائیلی فلسطینیوں کو مار رہے تھے۔

طالبہ کے مطابق ریس نے کہا وہ یہودی ہے اور غصے میں آ گیا اور طالبہ پر سام دشمنی کا الزام لگایا۔

عینی شاہدین بشمول عملے نے بتایا کہ انہوں نے ریز کو ملامتی الفاظ استعمال کرتے اور چیختے ہوئے سنا کہ اسے طالب علم کا سر قلم کر دینا چاہیے۔

ایک بیان میں ہیوسٹن کاؤنٹی اسکول ڈسٹرکٹ کی ترجمان جینیفر جونز نے کہا کہ ریس 7 دسمبر سے مڈل اسکول واپس نہیں آیا ہے۔

کینڈل نے کہا کہ اس کے بانڈ کی شرائط تقاضا کرتی ہیں کہ وہ اسکول اور اس طالبہ سے دور رہے جس کو دھمکیاں دینے کا اس پر الزام ہے۔

ڈسٹرکٹ اٹارنی نے مزید کہا کہ وہ اگلے ماہ گرینڈ جیوری سے فرد جرم حاصل کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں