یوکرین کے معاملے پر روسی صدر سے بات کرنے کو تیار ہیں: فرانس

میرا فون نمبر تبدیل نہیں ہوا: ماکروں کا پوتین کو پیغام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

فرانسیسی صدر عمانویل ماکروں نے جمعہ کو کہا ہے کہ وہ اپنے روسی ہم منصب ولادیمیر پوتین سے بات کرنے کے لیے تیار ہیں۔ اس سے یوکرین اور روس کے درمیان پائیدار امن قائم کرنے میں مدد ملے گی۔

فروری 2022ء میں یوکرین میں جنگ شروع ہونے سے پہلے ماکروں اور پوتین کے درمیان اچھے تعلقات رہے ہیں۔

روسی فوجی آپریشن سے پہلے کے ہفتوں میں میکروں کی سفارتی کوششیں جنگ کو روکنے میں ناکام رہی، لیکن اس کے بعد اس نے مہینوں تک روسی صدر کے ساتھ کھلی بات چیت جاری رکھی۔

جنگ جاری رہنے سے ان کے سفارتی اور ذاتی تعلقات خراب ہوتے گئے۔ اس سال کے شروع میں ماکروں نے پوتین سے فرانس کے اعلیٰ ترین اعزاز کو چھیننے کے امکان پر تبادلہ خیال کیا تھا۔

جمعرات کو سال کے اختتام کے موقع پر اپنی سالانہ پریس کانفرنس کے دوران پوتین نے فرانسیسی چینل TF1 پر ایک صحافی سے فرانس اور میکروں کے بارے میں سوال کیا۔

پوتین نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ "کچھ مواقع پر فرانسیسی صدر نے ہمارے ساتھ اپنے تعلقات منجمد کر لیے۔ ہم نے ایسا نہیں کیا۔ اگر نہیں تو ہم نئی صورتحال سے نمٹیں گے۔

برسلز میں ایک سربراہی اجلاس کے اختتام پر اپنی تقریر کے دوران یورپی یونین کے رہ نماؤں نے یوکرین کی رکنیت پر مذاکرات کے دروازے کھولنے کا فیصلہ کیا۔

میکروں نے کہا کہ وہ اب بھی پوتین کے ساتھ بات چیت کے لیے تیار ہیں تاکہ پرامن حل تک پہنچا جا سکے، تاہم اس کے لیے روسی صدر کا رابطہ کرنا ضروری ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "میں نے یکطرفہ طور پر جنگ شروع نہیں کی اور نہ ہی میں نے ان معاہدوں کو توڑا جن پر میں نے نتیجہ اخذ کیا تھا۔ یہ فرانس نہیں تھا جس نے یوکرین میں جنگی جرائم کا ارتکاب کرنے کا فیصلہ کیا تھا، جس کی وجہ سے بات چیت تقریباً ناممکن ہو گئی تھی"۔

انہوں نے کہا کہ اگر پوتین ایسی بات چیت شروع کرنے کی خواہش کا اظہار کرتے ہیں جو دیرپا امن کا باعث بن سکے تو فرانس مدد کے لیے تیار ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں