برطانوی توانائی کمپنی کے جہازوں کی بحیرہ احمر میں نقل و حرکت معطل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بحیرہ احمر میں یمنی حوثیوں کے مسلسل راکٹ حملوں کے باعث بگڑی ہوئی صورتحال کے پیش نظر برطانوی توانائی کمپنی نے اپنے جہازوں کی نقل و حرکت کو معطل کرنے کا اعلان کیا ہے۔

اس طرح برطانوی توانائی کمپنی بھی کئی دوسری کمپنیوں کے ساتھ شامل ہوگئی ہے جنھوں نے سیکورٹی وجوہات کی بنا پر بحیرہ احمر کے راستے اپنی آمد و رفت روک رکھی ہے۔

واضح رہے سات اکتوبر کے بعد جب سے غزہ میں اسرائیلی بمباری جاری ہے علاقائی سمندر میں امریکی بحری بیڑے آنے کے بعد تناؤ کی کیفیت بن چکی ہے۔ ایرانی حمایت یافتہ حوثی اور دوسرے عسکری گروپ زمینی و بحری اہداف کو نشانہ بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

چند روز قبل حوثیوں نے دھمکی دی تھی کہ اگر غزہ میں اشیائے خوردونوش اور انسانی بنیادوں پر امداد کی فراہمی میں رکاوٹیں معطل رکھی جائیں گی تو اسرائیل بھی کوئی سامان بحیرہ احمر کے راستے منتقل نہیں ہونے دیا جائے گا۔ اس دوران حوثیوں نے اپنے راکٹ حملوں میں غیر معمولی طور پر شدت پیدا کر دی ہے۔
اس صورتحال کے پیش نظر برطانوی کمپنی بھی پیر کے روز سے ان کمپنیوں کے ساتھ مل گئی یے جنہوں نے اپنی آمدر و رفت بحیرہ احمر میں معطل کر رکھی ہے۔ برطانوی کمپنی کے اعلان کے مطابق نے عارضی طور پر اپنی معطل کر دی ہیں۔
پیر کے روز تائیوانی کنٹینر شپنگ لائین ایور گرین نے بھی عارضی طور پر اپنی سرگرمیاں روک دی ہیں ۔

ایور گرین کمپنی نے اپنے اعلان میں بتایا ہے کہ اس کے جہاز بحیرہ احمر کے نزدیک محفوظ پانیوں میں رکے رہیں گے اور اگلے ہدایات کا انتظار کریں گے۔ جبکہ جہازوں کے پہلے سے بنے ہوئے شیڈول کو تبدیل کر دیا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں