فلسطین اسرائیل تنازع

میکرون نے اسرائیل سے کہا کہ حماس سے لڑنے کا مطلب 'غزہ کو مسمار' کرنا نہیں ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون نے بدھ کے روز کہا کہ دہشت گردی سے لڑنے کا مطلب "غزہ کو مسمار کرنا" نہیں ہے۔ وہ 7 اکتوبر کو حماس کے حملے پر اسرائیل کی جانب سے ردِعمل کے حوالے سے بات کر رہے تھے۔

میکرون نے فرانس 5 ٹی وی چینل کو بتایا، "ہم اس خیال کو مضبوط نہیں ہونے دے سکتے کہ دہشت گردی کے خلاف مؤثر جنگ کا مطلب غزہ کو مسمار یا شہری آبادی پر بلاامتیاز حملہ کرنا ہے۔"

انہوں نے اسرائیل سے مطالبہ کیا کہ وہ "اس ردِعمل کو روکے کیونکہ یہ مناسب نہیں ہے۔ کیونکہ تمام زندگیاں ایک جیسی ہیں اور ہم ان کا دفاع کرتے ہیں۔"

"اسرائیل کے اپنے دفاع اور دہشت گردی سے لڑنے کے حق" کو تسلیم کرتے ہوئے میکرون نے کہا کہ فرانس نے شہریوں کے تحفظ اور "انسانی بنیادوں پر جنگ بندی کے معاہدے" کا مطالبہ کیا۔

غزہ کی اب تک کی خونریز ترین جنگ اس وقت شروع ہوئی جب حماس نے 7 اکتوبر کو اسرائیل پر حملہ کیا جس میں تقریباً 1,140 افراد ہلاک ہوئے جن میں زیادہ تر عام شہری تھے اور 250 کے قریب اغوا کیے گئے۔ یہ اسرائیلی اعداد و شمار پر مبنی اے ایف پی کی تعداد کے مطابق ہے۔

اس کے جواب میں اسرائیل نے زمینی حملے کے ساتھ ساتھ مسلسل بمباری شروع کردی۔

حماس نے بدھ کو کہا کہ غزہ میں 20,000 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں جن میں زیادہ تر خواتین اور بچے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں