پوتین یوکرین کے ساتھ معاہدہ اور جنگ بندی کرنا چاہتے ہیں: رپورٹ

غزہ میں جنگ کے لیے مغربی حمایت میں کمی اور یوکرینی حملے کی ناکامی جنگ بندی کے معاہدے کا باعث بن سکتی: نیو یارک ٹائمز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یوکرین کے ناکام جوابی حملے اور کمزور مغربی حمایت کی وجہ سے روسی صدر پوتین نے کہا ہے کہ روس کے جنگی مقاصد میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔ مغربی ذرائع نے امریکی اخبار "نیو یارک ٹائمز" کو بتایا ہے کہ پوتین معاہدہ کرنے اور جنگ بندی کے لیے تیار ہیں۔

نیو یارک ٹائمز کے مطابق منگل کو اپنے جرنیلوں سے تقریر میں پوتین نے شیخی مارتے ہوئے کہا کہ یوکرین اس قدر محصور ہو چکا ہے کہ حملہ آور روسی افواج جو چاہیں کر رہی ہیں۔ جو کچھ ہمارا ہے ہم اسے نہیں چھوڑیں گے۔ اگر وہ مذاکرات کرنا چاہتے ہیں تو انہیں مذاکرات کرنے دیں۔ لیکن دوسری طرف بیک ڈور چینلز پر پوتین ایک مختلف پیغام بھیج رہے تھےکہ وہ معاہدہ کرنے کے لیے تیار ہے۔

کریملن اور امریکیوں کے قریبی دو سابق سینئر روسی حکام کے مطابق پوتین کم از کم ستمبر سے ثالثوں کے ذریعے اشارہ دے رہے ہیں کہ وہ ایسی جنگ بندی کے لیے بات کرنے کو تیار ہیں جو موجودہ خطوط پر لڑائی کو منجمد کر دے۔

درحقیقت امریکی حکام کے مطابق پوتین نے ایک سال قبل 2022 کے موسم خزاں میں جنگ بندی کے معاہدے کے لیے سینسر پیغامات بھی بھیجے تھے۔ اس خاموش اقدام کا پہلے اعلان نہیں کیا گیا تھا۔ یہ اقدام یوکرین کی جانب سے ملک کے شمال مشرق میں روسی فوج کو شکست دینے کے بعد سامنے آیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق پوتین کی جنگ بندی میں بار بار دلچسپی اس بات کی ایک مثال ہے کہ انھوں نے بند دروازوں کے پیچھے جنگ سے نمٹنے کے لیے موقع پرستی اور اصلاح پسندی کے اپنے نقطہ نظر کی تعریف کیسے کی ہے۔

روسیوں کے ساتھ درجنوں انٹرویوز اور کریملن کے اندرونی کاموں کے بارے میں بصیرت کے ساتھ بین الاقوامی عہدیداروں کے ساتھ انٹرویوز میں پوتین نے خطرات کو محدود کرنے اور توقع سے زیادہ طویل ہو جانے والی اس جنگ میں اپنے آپشنز کو کھلا رکھنے کی تبدیریں بیان کی ہیں۔

اس بات کا کوئی ثبوت موجود نہیں ہے کہ یوکرین کے رہنما جنہوں نے اپنے تمام علاقوں پر دوبارہ کنٹرول حاصل کرنے کا عہد کیا ہے ایسے معاہدے کو قبول کریں گے۔ کچھ امریکی حکام کا کہنا ہے کہ یہ کریملن کی طرف سے گمراہ کرنے کی ایک جانی پہچانی کوشش ہو سکتی ہے۔ صورت حال پوتین کی طرف سے کسی تصفیے تک پہنچنے کی حقیقی خواہش کی عکاسی نہیں کرتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں