حوثی حملوں سے بچاؤ کیلئے بحیرہ احمر میں "اٹلانٹا" کی جگہ نئے مشن کے مخالف نہیں: سپین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ہسپانوی وزیر اعظم پیڈرو سانچیز نے تصدیق کی ہے کہ ان کا ملک یمنی حوثی گروپ کے حملوں سے بحیرہ احمر میں تجارتی بحری جہازوں کی حفاظت کے لیے یورپی یونین کی انسدادِ بحری قزاقی بحری فورس جسے آپریشن اٹلانٹا کہا جاتا ہے کہ کے استعمال کی حمایت نہیں کرتا۔ انہوں نے کہا کہ میڈرڈ وہاں کوئی مختلف مشن قائم کرنے کا مخالف نہیں ہے۔

یاد رہے یورپی یونین نے بحیرہ احمر میں بحری جہاز رانی پر حوثی باغیوں کے حملوں سے نمٹنے کے لیے امریکی قیادت میں نئے آپریشن کی مدد کے لیے افریقہ سے اپنے انسداد قزاقی مشن کے مینڈیٹ کو بڑھانے کی تجویز پیش کی تھی۔

بوریل کی تجویز

چند روز قبل یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے رابطہ کار جوزپ بوریل نے صومالی ساحل سے دور "اٹلانٹا" مشن کو وسعت دینے کی تجویز پیش کی۔ یہ تجویز اس وقت یورپی یونین کے 27 رکن ممالک کی طرف سے زیر غور ہے۔ سپین یورپی یونین کا واحد ملک ہے جسے "اٹلانٹا" مشن کو بڑھانے کے بارے میں تحفظات ہیں۔ یاد رہے گزشتہ 18 نومبر سے درجنوں بحری جہاز حوثیوں کے حملوں کا نشانہ بن چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں