تُرک سائنسدان کی موسم بہار سے پہلے خوفناک زلزلے کی پیش گوئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ترکیہ کے ماہر ارضیات پروفیسر اووگن احمد ایرکان نے موسم بہار سے پہلے ملک میں ایک طاقتور زلزلے کی پیش گوئی کی ہے لیکن وہ اس زلزلے کے صحیح مقام کا تعین نہیں کر پائے۔

اناطولیہ" نیوز ایجنسی نے ہیبر گلوبل ٹی وی چینل کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ "میرا خیال ہے کہ کسی نہ کسی طرح ہم موسم بہار سے پہلے زلزلے کا مشاہدہ کریں گے لیکن مجھے نہیں معلوم کہ یہ اس وقت کہاں ہوگا۔ بدقسمتی سے کرسٹلائز ہونے والی تصویر اس امکان کو ظاہر کرتی ہے کسی بڑے زلزلے کی آمد متوقع ہے‘‘۔

ترکی میں گذشتہ سال فروری میں ایک شدید زلزلہ آیا تھا جس میں 50,000 سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے۔

ترک سائنسدان نے زور دے کر کہا کہ اناطولیہ میں صورتحال انتہائی کشیدہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ "اور یہ تناؤ ہر طرف بڑھتا جا رہا ہے۔ کسی حد تک غیر معمولی صورتحال پیدا ہو رہی ہے۔ 4 کی شدت کے زلزلے طاقت ور نہیں ہوتے، لیکن ملک کے مختلف حصوں میں 4 سے زیادہ شدت کے زلزلوں کے آنے سے لوگ لرز اٹھتے ہیں"۔

ترک سائنس دان نے نشاندہی کی کہ 2011ء کے زلزلے کے دوران کشیدگی ہاتے کی طرف اور بعد میں ہاکاری کی طرف منتقل ہوئی۔

انہوں نے مزید کہا کہ "دراڑیں کافی عرصے سے خاموش ہیں۔ یہاں زلزلہ کا فرق ہے۔ یہاں ایسی جگہیں ہیں جہاں مستقبل میں زلزلے آئیں گے۔ حقیقت یہ ہے کہ ہاکاری میں یکے بعد دیگرے زلزلے آتے رہتے ہیں۔ اس علاقے میں زمین کی پرت کی موٹائی تقریباً 43 کلومیٹر ہے اور یہ اس وقت ہے۔ یہ پھٹنے کے خلاف مزاحمت کرتی ہے لیکن اگر یہاں زمین کی پرت کو پھٹنے کے لیے کافی دباؤ پیدا ہو جائے تو تقریباً 7 شدت کا زلزلہ متوقع ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں