ایران میں دو دھماکوں سے ہونے والی تقریباً ایک سو ہلاکتوں پر سخت صدمہ ہوا ہے: چین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

چین نے ایران کے جنوبی شہر کرمان میں بدھ کے روز کیے گئے دو دھماکوں اور ان کے نتیجے میں ہونے والے بھاری جانی نقصان پر گہرے صدمے کا اظہار کیا ہے۔

اس سلسلے میں چین کے ترجمان نے جمعرات کے روز کہا 'بیجنگ کے ساتھ قریبی تعلقات اور معاہدات میں جڑے ایران میں کیے گئے دھماکوں پر سخت رنج ہے جن میں کم از کم 95 ایرانی ہلاک ہو گئے ہیں۔ '

ایران کے سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق بدھ کے روز کرمان شہر میں پاسداران انقلاب کے مقتول کمانڈر جنرل قاسم سلیمانی کی قبر کے قریب اس وقت دھماکے ہوئے جب جنرل سلیمانی کی چوتھی برسی کے سلسلے میں ایرانی شہری ان کی قبر پر آئے تھے۔

ایران نے سرکاری ذرائع ابلاغ اور علاقائی حکام کے توسط سے ان دھماکوں کو دہشت گردی کا نام دیا ہے۔ ان دھماکوں کے بعد خطے میں جنگ پھیلنے کا خوف مزید پھیل گیا ہے۔

چین میں ترجمان وزارت خارجہ وانگ وین بن نے اس بارے میں اپنے مذمتی و تعزیتی بیان میں کہا ' دہشت گردانہ حملوں سے ہونے والے بھاری جانی نقصان پر ہم سخت صدمے میں ہیں۔

چینی ترجمان نے اپنی معمول کی پریس کانفرنس کے دوران کہا 'ہم اس افسوسناک واقعے میں متاثرہ افراد اور خاندانوں کے ساتھ اپنی دلی تعزیت کا اظہار کرتے ہیں۔ '

چین کی طرف سے یہ بھی کہا گیا ہے ' ہم ہر طرح کی دہشت گردی کے خلاف ہیں ان کی سختی سے مذمت کرتے ہیں، نیز ایران کی قومی سلامتی و استحکام کے لیے کوششوں کی حمایت کرتے ہیں ۔'

اس سے قبل ایران نے ان دھماکوں کا الزام اسرائیل اور امریکہ پر لگایا ہے۔ جبکہ اس کے سپریم لیڈرعلی خامنہ ای نے سخت جواب دینے کی دھمکی ہے، تاہم امریکہ نے ان دھماکوں میں ملوث ہونے کے الزام کی تردید کی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں