مشرق وسطیٰ

حماس کی مالی امداد کرنے والوں کی نشاندہی پر 10 ملین امریکی ڈالر کا انعام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ریاست ہائے متحدہ امریکہ نے حماس کے پانچ بڑے فنانسرز کے خلاف عالمی سطح پر ایک بڑے انعام کی پیش کش کی ہے کہ جو کوئی بھی حماس کو رقم کی ترسیل روکنے کے لیے کارآمد اطلاعات اور تعاون دے گا اسے دس ملین ڈالر انعام دیا جائے گا۔ یہ اعلان امریکی دفتر خارجہ نے جمعہ کے روز کیا ہے۔

امریکہ اس سے پہلے حماس کے خلاف کی جانے والی اسرائیلی کارروائیوں کا حصہ رہا ہے۔ جیسا کہ غزہ کی جنگ کے لیے امریکہ نے بھر پور اتحادی کے طور پر ہر سطح اور ہر حد تک اسرائیل کا ساتھ دیا۔

اسی سات اکتوبر سے شروع ہونے والی جنگ کے دوران امریکہ نے فلسطینی مزاحمتی گروپ کے خلاف پابندیوں کے چار راؤنڈ مکمل کیے۔ لیکن اب امریکہ نے حماس کے خلاف مزید اقدامات کا فیصلہ کیا ہے۔

فلسطینی مزاحمتی گروپ حماس کے خلاف امریکہ کے پہلے سے زیادہ سخت اقدامات کے نتیجے میں اسرائیلی ہدف کے مطابق حماس کا مکمل خاتمہ ممکن ہو سکے گا اور اسرائیلی کامیابی کی امید آگے بڑھ سکے گی۔

امریکی دفتر خارجہ نے اس سلسلے میں پانچ افراد کے نام بھی پیش کیے ہیں جو امریکہ دی گئی معلومات کے مطابق حماس کے بڑے فنانسرز ہیں۔ ان میں عبدالباسط حمزہ الاحسن خیر، عامر کمال شریف الشواہ، احمد سدو جہلب، ولید محمد مصطفیٰ جد اللہ اور محمد احمد عبد الدائم نصراللہ شامل ہیں۔

واضح رہے امریکی دفتر خارجہ کا ان پانچوں کے بارے میں کہنا ہے کہ ہم ان پانچوں کو پہلے ہی دہشت گرد قرار دے چکے ہیں۔

امریکی دفتر خارجہ کے مطابق پہلا نام جسے عام طور پر حمزہ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے یہ سوڈان سے ہیں حماس کے لیے کئی کمپنیوں کے ذریعے فنانسنگ کا راستہ اختیار کیے ہوئے ہیں۔ یہ اب تک امریکی دعوے کے مطابق 20 ملین ڈالر کی رقم حماس کو منتقل کر چکے ہیں۔

حمزہ کے بارے میں امریکی دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ یہ سوڈانی صدر عمر البشیر اور سوڈان میں استحکام کو نقصان پہنچانے والے گروپوں کے بھی حامی ہیں۔

امریکی دفتر خارجہ کے مطابق انہیں ناموں میں عامر کمال شریف الشوا ، احمد سدو جہلب ،ولید محمد مصطفیٰ جداللہ شامل ہیں ، جو ترکیہ میں ایک سرمایہ کار گروپوں کا حصہ ہیں۔ جبکہ نصراللہ کے ایرانی اداروں کے ساتھ قریبی تعلقات ہیں اور یہ بھی دسیوں ملین ڈالر کی رقم حماس کو منتقل کر چکے ہیں۔ دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ ماہ اکتوبر میں نصراللہ قطر میں موجود رہے۔

امریکہ کا کہنا ہے کہ یہ انعامی رقم ان اطلاعات کے بدلے میں دی جائے گی جو حماس کے کسی بھی مالی ذریعے ، بڑے ڈونرز، مالیاتی اداروں ، حماس کو رقم منتقلی کے ذرائع اور ٹیکنالوجی منتقلی کے بارے میں ہوں گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں