نیویارک: یہودی معبد کے نیچے سرنگوں کا سراغ لگا لیا گیا، دس گرفتاریاں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکہ کے شہر نیویارک میں ایک قدیم یہودی عبادت گاہ کے نیچے غیر قانونی سرنگیں پکڑی گئی ہیں جنہیں بند کرنے کی کوشش کے دوران شدید ہنگامہ آرائی ہوئی اور پولیس نے کم سے کم 10 افراد کو گرفتار کر لیا۔

تاہم سرنگوں کی دریافت کے بعد سوشل میڈیا پر سازشی نظریات کا طوفان برپا ہے اور کئی طرح کے دعوے کیے جا رہے ہیں۔

یہ سرنگیں نیویارک کے معروف علاقے بروکلین میں پیر کو سامنے آئیں اور ان کے پکڑے جانے کی ویڈیوز سوشل میڈیا پر وائرل ہو چکی ہیں۔

برطانوی اخبار ڈیلی میل کے مطابق جب تعمیراتی کارکنوں کو سرنگین بند کرنے کیلئے بلایا گیا تو نوجوان یہودی مرد ان کے سامنے آ گئے۔ اس پر پولیس کی مدد طلب کی گئی اور دس افراد گرفتار کرلیے گئے۔

یہودی عبادت گاہ کے منتظم رابی یوسف براؤن نے نوجوانوں کے اقدامات کی مذمت کی ہے۔

امریکی اور برطانوی ذرائع ابلاغ میں اب تک جو معلومات سامنے آئی ہیں ان کے مطابق یہ سرنگیں ایک یہودی مذہبی گروپ خبد لوباویچ کی جانب سے بنائی گئیں۔

یہ گروپ یہودی عبادت گاہوں کے روایتی رہنماوں کا مخالف ہے اور ان کی مخاصمت کئی عشروں سے چل رہی ہے۔

ڈیلی میل کے مطابق خبد گروپ کے اراکین کئی مہینوں سے یہ سرنگیں کھود رہے تھے لیکن ان کا مقصد واضح نہیں۔ کچھ کے خیال میں ان سرنگوں کے ذیعے وہ ایک عبادتگاہ کو ایک تاریخی مقام سے جوڑا جا رہا تھا جب کہ دیگر کے خیال میں یہ محض عبادت گاہ کو توسیع دینے کے لیے تھی۔

یہودی عبادت گاہ کے رہنماؤں کو سرنگوں کی موجودگی کا علم دسمبر میں ہوا جس کے بعد انہوں نے انجینئرز کو بلا کر نقصانات کا جائزہ لیا اور پیر کو سرنگیں بند کرنے کی کوشش کی جہاں سے یہ معاملہ منظر عام پر آیا۔

سیمنٹ سے بھرے ٹرک سرنگوں کو بند کرنے کے لیے بلائے گئے تھے جو مرکزی عبادت گاہ تک آتی تھیں۔

جب تعمیراتی کارکنوں نے سرنگیں بند کرنے کی کوشش کی تو خبد گروپ کے نوجوان ان سے لڑ پڑے اور دھینگا مشتی ہوئی۔

یہ معاملہ ایک ایسے وقت پر سامنے آیا ہے جب ذرائع ابلاغ میں غزہ میں حماس کی سرنگوں کے نیٹ ورک کا چرچا ہے۔ اسرائیل دو ماہ سے حماس کی ان سرنگوں کو تباہ کرنے کی ناکام کوشش کر رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں