فلسطین اسرائیل تنازع

یرغمالیوں کی رہائی کے لیے دوبارہ مذاکرات کیے جائیں: میکرون

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فرانس کے صدر میکرون نے غزہ میں اسرائیلی جنگ کے 100 دن ہونے پر ایک مرتبہ پھر غزہ میں حماس کی قید میں موجود اسرائیلی یرغمالیوں کے بارے میں فکر مندی ظاہر کرتے ہوئے ان کی رہائی کے لیے نئے سرے سے مذاکرات کرنے کا کہا ہے۔

فرانسیسی صدر نے یہ بات ایسے موقع پر کہی ہے جب غزہ میں اسرائیلی فوج کے ہاتھوں فلسطینیوں کی ہلاکتیں 24 ہزار کو چھو رہی ہیں۔ ان ہلاک کیے گئے فلسطینیوں میں بڑی تعداد فلسطینی بچوں اور عورتوں کی ہے۔ جبکہ بے گھر فلسطینیوں کی تعداد بیس لاکھ سے کہیں زیادہ ہو چکی ہے۔

فلسطینی صدر نے فرانسیسی اور اسرائیلی یرغمالیوں کے لیے انسانی ہمدردی کے جذبے کی بنیاد اسرائیلی یرغمالیوں کی رہائی پر زور دیتے ہوئے کہا ' فرانس سات اکتوبر سے یرغام بنائے گئے اسرائیلیوں کی رہائی کے لیے پختہ عزم رکھتا ہے۔

ان کا یہ بیان ایک ویڈیو کے ذریعے سامنے آیا ہے۔ میکرون نے اس ویڈیو کے ذریعے کہا ' فرانس اپنے بچوں کو ایسے نہیں چھوڑ سکتا، اسی لیے ان کی رہائی کے لیے بار بار مذاکرات کرنا پڑ رہے ہیں۔

واضح رہے تین فرانسیس شہری سات اکتوبر کے بعد ابھی تک مل نہیں رہے، نہ ان کے بارے میں کسی گنتی میں اظہار کیا گیا ہے۔ 15 دسمبر کو اسرائیل نے اعلان کیا تھا کہ ایک فرانسیسی اسرائیلی ایلیا ٹولیڈانو کی ہلاکت کا علان کیا تھا۔ اس کے ساتھی فرانسیسی یرغمالی کو ایک معاہدے کے تحت حماس نے ماہ نومبر میں رہا کر دیا تھا۔

مگر بعد ازاں اسرائیل نے جنگ بندی کے بجائے غزہ میں بمباری کرتے رہنے اور جنگ کو جاری رکھنے کو ترجیح دی، جس کی وجہ سے بقیہ یرغمالیوں کی رہائی رک گئی۔ اسرائیل کی اس جنگی پالیسی پر یرغمالیوں کے اہل خانہ بھی پریشان اور ناراض ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں