مصر میں ایک قدیم قبرستان میں سیاح کو ہراساں کرنے کی ویڈیو کی حقیقت کیا ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصری وزارت داخلہ نے ایک ویڈیو کی تفصیلات اور اس کی حقیقت کا انکشاف کیا ہے جس میں ایک کوریائی سیاح کو قدیم قبرستان کے علاقے میں ہراساں کرنے کا واقعہ دکھایا گیا ہے۔

وزارت داخلہ نے کل سوموارکو ایک بیان میں تصدیق کی کہ یہ کلپ پرانا ہے اور اخوان المسلمون سے وابستہ صفحات پر پھیلایا گیا تھا، جس میں ایک کوریائی سیاح کو آثار قدیمہ کے قبرستانوں کے ایک علاقے میں ایک شخص کی طرف سے ہراساں کرنے کی کوشش کا نشانہ بنایا گیا تھا اور یہ پہلے 2022 میں گردش کر چکا تھا۔

بیان میں مزید کہا گیا ہےکہ "اپریل 2022ء کے مہینے کے دوران مذکورہ کوریائی نے قاہرہ کے سکیورٹی ڈائریکٹوریٹ میں منشاہ ناصر پولیس ڈیپارٹمنٹ میں ایک رپورٹ درج کرائی، جس کے دوران اسے قاتیبائی قبرستان کے علاقے میں ایک شخص نے ہراساں کرنے کی کوشش کی اور اسے نقصان پہنچایا۔

5 سال کی سنگین سزا

وزارت داخلہ کا کہنا ہے کہ اس واقعے کے مرتکب ایک "دوہری شہریت" کے حامل شخص کو اس وقت اسے گرفتار کر لیا گیا تھا۔ اس کے خلاف قانونی اقدامات کیے گئے اور اسے 5 سال کی قید با مشقت کی سزا سنائی گئی تھی۔ ملزم اس وقت بھی اصلاح اور بحالی کےایک مرکز میں ہے۔

جبکہ وزارت داخلہ نے اس بات کی تصدیق کی کہ اس طرح کی ویڈیوز گردش کرنا دہشت گرد اخوان المسلمون کا کام ہے جو ریاست کو بدنام کرنے کے لیے اس طرح کے ویڈیوز کو بار بار وائرل کررہے ہیں۔

اس طرح کے ہتھکنڈوں کا مقصد ریاستی سلامتی کو نقصان پہنچانا اور ملک میں سیاحت کے شعبے کو بدنام کرنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں