روسی طیارہ افغانستان میں گر کر تباہ، چار افراد زندہ تلاش کر لیے گئے، دو لاپتا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

افغان حکومت کے ترجمان ذبیع اللہ مجاہد نے کہا ہے کہ افغانستان میں لاپتا ہونے والے روسی طیارے کے پائلٹ سمیت چار افراد کو زندہ بچا لیا گیا ہے جبکہ دو افراد کی تلاش جاری ہے۔

اتوار کو سوشل میڈیا پلیٹ فارم ایکس (ٹوئٹر) پر ایک پوسٹ میں انہوں نے لکھا کہ ’صوبہ بدخشاں میں لاپتہ ہونے والا طیارے کو ارز کوہ کے علاقے میں تلاش کر لیا گیا ہے۔ پائلٹ کو آئی ای اے سرچ گروپ نے دریافت کیا ہے۔

رپورٹس کے مطابق پائلٹ سمیت چار دیگر افراد اس واقعے میں محفوظ رہے ہیں۔ افغان حکومت کی تفتیشی ٹیم باقی افراد کی تلاش اور مدد فراہم کرنے کی کوششیں جاری رکھے ہوئے ہے۔‘

افغانستان کی سرکاری نیوز ایجنسی بی این اے کے مطابق وزارت ٹرانسپورٹ و ایوی ایشن کا کہنا ہے کہ گذشتہ شام جو طیارہ بدخشان کے پہاڑوں میں گر کر تباہ ہوا وہ روس کا پرائیویٹ جیٹ ہے۔

روسی ایوی ایشن حکام نے ایک بیان میں کہا کہ ایک روسی رجسٹرڈ طیارہ جس پر چھ افراد سوار تھے گذشتہ رات افغانستان کی فضائی حدود میں داخل ہونے کے بعد ریڈار اسکرین سے غائب ہو گیا۔ اُدھر افغانستان کی مقامی پولیس کے نے بتایا کہ انہیں طیارے کے حادثے کی اطلاع ملی تھی۔

افغانستان کے شمالی صوبے بدخشاں کی پولیس نے اتوار کو کہا کہ اُسے اس طیارے کے گر کر تباہ ہونے کی اطلاع موصول ہوئی ہے۔

دریں اثناء بدخشاں کے صوبائی ترجمان ذبیح اللہ امیری نے خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا کہ ایک ٹیم کو اس مقام پر بھیج دیا گیا ہے۔ حادثہ ایک دور افتادہ مقام پر پیش آیا۔ جائے حادثہ صوبے بدخشاں کے دارالحکومت فیض آباد سے 200 کلومیٹر یا (124 میل) سے زیادہ کے فاصلے پر ایک دور دراز علاقہ تھا۔

روسی ایوی ایشن حکام نے ایک بیان میں کہا کہ حادثے کا شکار ہونے والا طیارہ ایک چارٹر ایمبولینس پرواز تھی جس نے بھارت سے اپنا سفر شروع کیا تھا اور یہ طیارہ ازبکستان سے ہوتا ہوا ماسکو پہنچنا تھا۔ یہ فرانسیسی ساختہ ڈیسالٹ ایوی ایشن فالکن 10 جیٹ تھا جسے 1978ء میں تیار کیا گیا تھا۔

افغان صوبائی پولیس کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا کہ یہ حادثہ گذشتہ شب انتہائی شمال میں بدخشاں کے دور افتادہ پہاڑی علاقے میں پیش آیا۔ پولیس ترجمان نے تاہم اس طیارے کی قسم کے بارے میں کوئی تصدیق شدہ تفصیلات نہیں بتائیں نہ ہی طیارہ حادثے اور اس کے نتیجے میں ہونے والی ہلاکتوں کی وجہ بتائی۔

اُدھر بھارت کی سول ایوی ایشن اتھارٹی نے کہا کہ گر کر تباہ ہونے والا یہ طیارہ کوئی طے شدہ تجارتی پرواز یا بھارتی چارٹرڈ جہاز نہیں تھا۔

ہوائی جہاز بنانے والی کمپنی ڈسالٹ نے عام کاروباری اوقات سے باہر اس حادثے پر تبصرے کی درخواست کا کوئی جواب نہیں دیا۔

مقامی خبروں کے مطابق روسی ایوی ایشن حکام نے کہا ہے کہ روسی رجسٹرڈ طیارہ ہفتے کی شام کو افغانستان میں ریڈار سے غائب ہوا۔ روسی حکام نے کہا ہے کہ وہ افغانستان اور تاجکستان کے حکام کے ساتھ رابطے میں ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں