ٹرمپ کا نکی ہیلی پربھارتی نژاد ہونےکی وجہ سے صدارتی الیکشن کے لیے نا اہلیت کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جنوبی کیرولائنا کی سابق گورنر نکی ہیلی اس ہفتے کے اوائل میں نیو ہیمپشائر میں اپنے ریپبلکن حریف ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف انتخابی مہم چلا رہی ہیں، جو ریاست میں منگل کو ہونے والے پرائمری انتخابات سے قبل ہو رہی ہے۔

سابق امریکی صدرنے ہیلی پراپنے زبانی حملے تیز کرتے ہوئے ایک بار پھر ان کے ہندوستانی نژاد ہونے پر تنقید کی۔

ٹرمپ کے دورمیں اقوام متحدہ میں امریکی سفیرکے طورپرخدمات انجام دینے والی ہیلی نے گذشتہ پیر کو آئیووا میں پرائمری انتخابات جیتنے کے بعد اپنے سابق باس کے حملے کا جواب دیا۔

ہیلی دو امیدواروں میں سے ایک ہیں جواب بھی ریپبلکن نامزدگی کے لیے ٹرمپ کے ساتھ مقابلہ کر رہے ہیں۔ وہ فلوریڈا کے گورنر رون ڈی سینٹیس سے پیچھے ہیں۔ جب کہ آئیووا میں وہ تیسرے نمبر پرآئیں جہاں ٹرمپ نے میدان مار لیا۔

ہیلی ہفتہ کو انتخابی ریلی اور اتوار اور پیر کو چار دیگر پروگراموں کے لیے نیو ہیمپشائر میں رکیں گی۔

ٹرمپ اس ہفتے کے شروع میں شام کی ریلیوں کے لیے نیو ہیمپشائر بھی واپس آئے تھے۔

ہیلی نے نیو ہیمپشائر میں اپنی حالیہ مہم کے دوران ٹرمپ پر کچھ سخت تنقید کی تھی، لیکن اس نے CNN کو بتایا کہ اگر وہ مجرمانہ الزامات میں سزا پاتے ہیں تو وہ اسے معاف کر دیں گی۔

ٹرمپ کی نائب کے عہدے کی پیشکش مسترد

جمعہ کو نکی ہیلی نے ٹرمپ کے ساتھ ان کی نائب صدر کے لیے انتخاب لڑنے کی تجویزکو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ٹرمپ کو بات کرنے کا سلقیہ بھی نہیں۔ وہ طنزا ان کے نام کا صرف پہلا حصہ لیتے ہیں۔

حالیہ ہفتوں میں ٹرمپ نے ایک نسل پرستانہ نظریہ کو اجاگرکیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ ہیلی امریکی صدر بننے کی اہل نہیں کیونکہ اس کے ہندوستانی تارکین وطن والدین ابھی تک امریکی شہری نہیں تھے۔

ہیلی ہندوستان سے آنے والے تارکین وطن کی بیٹی نمرتا نکی رندھاوا کی پیدائش ہوئی لیکن اس نے طویل عرصے سے اپنا درمیانی نام نکی استعمال کیا اور بعد میں اپنے شوہر کی کنیت کو شامل کرلیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں