امریکی فوج نے یمنی حوثیوں کی طرف سے داغا گیا میزائل مار گرایا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی فوج نے بحیرہ احمر میں ایک اور میزائل حملے کو ناکام بنا دیا ہے۔ ایک بیان کے مطابق یہ میزائل حملہ حوثیوں کے زیر کنٹرول علاقے سے داغا گیا تھا۔

واضح رہے اسرائیل کی غزہ میں جاری جنگ کے خلاف ایرانی حمایت یافتہ حوثیوں نے پچھلے کم سے کم دو ماہ سے بحیرہ احمر میں میزائل اور راکٹ حملے شروع کر رکھے ہیں۔

جبکہ امریکہ اور اس کے اتحادی ان حوثی حملوں کو روک رہے ہیں۔ امریکہ نے اپنے سب سے بڑے یورپی اتحادی برطانیہ کے ساتھ مل کر 12 جنوری سے یمن پر ایک بار پھر حملوں کا باقاعدہ آغاز کر کے حوثی مراکز کو نشانہ بنانے کا سلسلہ شروع کیا ہے تاکہ حوثیوں کی حملے کرنے کی صلاحیت کو کمزور کر سکے۔

اب امریکی فوج نے کہا کہ امریکی بحریہ کے جنگی جہاز نے جمعہ کے روز ایک میزائل مار گرایا ہے۔ یہ میزائل امریکی بیان کے مطابق یمن سے حوثیوں نے فائر کیا تھا۔

امریکی اور برطانوی افواج کے حوثیوں پر مشترکہ حملوں کے علاوہ واشنگٹن نے حوثیوں کے خلاف یکطرفہ فضائی حملوں کا ایک سلسلہ بھی شروع کر رکھا ہے، تاہم حوثی اس کے باوجود اپنے حملے جاری رکھنے ہوئے ہیں۔

امریکی سینٹرل کمانڈ کے ایک بیان کے مطابق 'ایرانی حمایت یافتہ حوثی جنگجووں نے یمن میں اپنے زیر کنٹرول علاقے سے ایک جہاز شکن بیلسٹک میزائل خلیج عدن کی طرف داغا، تاہم امریکہ کے 'یو ایس ایس کارنی' نے کامیابی سے اس بلیسٹک میزائل کو مار گرایا ہے۔ امریکی 'سینٹ کام' نے اس بارے میں کسی جانی نقصان یا کسی اہلکار کے زخمی ہونے کی تصدیق نہیں کی ہے۔

دریں اثنا سمندری نگرانی کرنے والے اداروں نے جمعہ کو یمن کے جنوبی پانیوں میں دو میزائل پھٹنے کی اطلاع دی ہے۔ تاہم یہ وضاحت نہیں کی گئی کہ آیا ان اعلان کردہ میزائلوں کا تعلق اسی امریکی بیان سے ہے جو سینٹ کام نے جاری کیا ہے یا یہ الگ واقعہ ہے۔

ایمبرے نے کہا کہ پاناما کے جھنڈے والے ایک آئل ٹینکر نے جمعہ کے روز خلیج عدن میں دو دھماکے دیکھےتھے۔ اس رپورٹ کی تصدیق 'یونائیٹڈ کنگڈم میری ٹائم ٹریڈ آپریشنز' نے بھی کی ہے۔ تاہم کسی نقصان کی اطلاع نہیں ملی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں