کسان احتجاج: تحریک پورے یورپ تک پھیل گئی، فرانس کے بڑے شہروں کا ٹریکٹر سے گھیراؤ

کسان بڑھتی قیمتوں، سستی برآمدات کے لیے یورپی یونین کو ذمہ دار ٹھہرا رہے ہیں۔

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

یورپی یونین کی پالیسیوں کی مذمت میں کئی یورپی ممالک میں پھیلی کسانوں کی ناراض تحریک کو پرسکون کرنے کی حکومتی کوششوں کے باوجود، فرانس میں کسانوں کی طرف سے مسلط کردہ محاصرے میں بدھ کو مزید توسیع ہوئی۔

شدید موسمی واقعات، برڈ فلو، ایندھن کی بڑھتی ہوئی قیمتیں اور ڈیوٹی فری یوکرائنی مصنوعات کی آمد نے کسانوں میں عدم اطمینان کو بڑھا دیا ہے۔

یہ احتجاج اسپین اور اٹلی سے شروع ہو کے فرانس تک پھیل گیا ہے۔

فرانس میں پیر سے کسانوں نے پیرس جانے والی کئی شاہراہوں کو اپنے ٹریکٹروں سے بند کر دیا ہے۔

انہوں نے دارالحکومت سے اندرون ملک جانے والی شاہراہوں کو بھی بند کر دیا۔ دارالحکومت میں 15,000 پولیس اہلکاروں کو متحرک کر دیا گیا۔

بدھ کی صبح، کسانوں نے فرانس کے تیسرے شہر لیون (جنوب مشرق) کو گھیرنے کے لیے اپنے ٹریکٹروں کے ساتھ پیش قدمی جاری رکھی۔ شمال کی طرف، کسانوں کا ایک کارواں رُنگِس مارکیٹ کی طرف روانہ ہوا، جو پیرس کے علاقے کو سپلائی کرنے والی دنیا کی سب سے بڑی تازہ پیداوار کی منڈی ہے۔

مشرقی فرانس میں، حکام کی طرف سے شمار کیے گئے 100 بند مقامات میں سے ایک پر، احتجاج میں شامل جوانا ٹراؤ، جو ایک غلہ کاشتکار اور مویشی بان ہیں نے کہا کہ"ہم امداد نہیں لینا چاہتے۔ ہم سب سے بڑھ کر ایک تسلی بخش ٹیرف چاہتے ہیں۔ "

زرعی ڈیزل پر ٹیکس میں اضافے کو منسوخ کرنے اور شراب تیار کرنے والوں کو 80 ملین یورو مالیت کی امداد فراہم کرنے سمیت معاون اقدامات کے باوجود، حکومت کسانوں کو پرسکون کرنے میں ناکام رہی ہے اور یورپی محاذ پر کام کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

وزیر زراعت مارک ویزنٹ بدھ کو "یورپی ہنگامی حالات" پر تبادلہ خیال کرنے کے لیے برسلز کا رخ کر رہے ہیں۔ پیرس نے مرکوسور بلاک کے ساتھ تجارتی معاہدے پر یورپی کمیشن کی مخالفت کا فیصلہ کیا تھا۔

اس بلاک میں لاطینی امریکہ (برازیل، ارجنٹائن، یوراگوئے اور پیراگوئے) کی نمایاں تجارتی طاقتیں شامل ہیں۔

فرانسیسی وزیر اقتصادیات برونو لی مائر نے بدھ کے روز میڈیا کو تصدیق کی کہ اہم زرعی ممالک کے ساتھ آزادانہ تجارت کا معاہدہ "ہمارے کسانوں کو فائدہ نہیں پہنچاتا اور اس کی موجودہ حالت میں اس پر دستخط نہیں کیے جا سکتے ہیں اور نہ ہونے چاہئیں۔"

پیرس نے واضح طور پر اس تجارتی معاہدے کو ختم کرنے کی مخالفت کا اظہار کیا تھا، جس کی وجہ سے یورپی کمیشن کے ساتھ تناؤ پیدا ہوا، جو بلاک کے رکن ممالک کے لیے تجارتی مذاکرات کا ذمہ دار ہے۔

صدر ایمانوئل میکرون، جنہوں نے "یورپ کو ذمہ دار ٹھہرانے" سے انکار کر دیا تھا لیکن فرانسیسی کسانوں کے بہت سے مطالبات کا دفاع کرنے کا عہد کیا تھا، جمعرات کو برسلز میں یورپی کمیشن کی صدر ارسولا وان ڈیر لیین کے ساتھ یورپی سربراہی اجلاس کے موقع پر ملاقات کرنے والے ہیں۔

"حکومتوں پر دباؤ"

کسان تحریک براعظم یورپ کے تمام حصوں تک پھیل گئی ہے، حالیہ ہفتوں میں جرمنی، پولینڈ، رومانیہ، بیلجیئم اور اٹلی میں ہونے والے مظاہروں کے بعد، اسپین کی تین اہم زرعی یونینوں نے منگل کو اس تحریک میں شمولیت کا اعلان کیا جس میں یورپی قوانین کی مذمت کرنے کے لیے "آنے والے ہفتوں" کے دوران پورے ملک میں موبائلائزیشن" آپریشنز شامل ہیں۔

اٹلی میں بھی درجنوں کسانوں نے منگل کو میلان کے قریب اپنے ٹریکٹروں کے ساتھ احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ انہیں "یورپ نے دھوکہ دیا ہے۔"

یونانی حکومت، جسے زرعی شعبے کی جانب سے بڑھتے ہوئے مظاہروں کا سامنا ہے، نے منگل کو وعدہ کیا کہ وہ گذشتہ سال کے سیلاب سے متاثرہ کسانوں کو مالی امداد کی ادائیگی میں تیزی لائے گی۔

نئی یورپی مشترکہ زرعی پالیسی، جس نے 2023 سے ماحولیاتی اہداف کو مضبوط کیا، اور یورپی "گرین چارٹر" قانون، اگرچہ ابھی تک نافذ نہیں ہوا، نے خاص طور پر کسانوں غصے کو ہوا دینے میں اہم کردار ادا کیا۔

اگرچہ فرانس یورپی زرعی سبسڈی کا بنیادی فائدہ اٹھانے والا تھا، جس کی رقم سالانہ نو بلین یورو سے زیادہ تھی،تاہم، اس کے کسانوں نے مشترکہ زرعی پالیسی کی مذمت کی۔

وزیر اعظم گیبریل اٹل، جنہوں نے ایک ماہ سے بھی کم عرصہ قبل اپنا عہدہ سنبھالا تھا، نے منگل کو "فرانسیسی زرعی استثنا" کی ضرورت پر زور دیا اور وعدہ کیا کہ حکومت اس بحران کا جواب دینے کے لیے "موجود" ہوگی۔

فرانسیسی پولیس کو جو کہ بھاری تعداد میں متحرک تھی، کو مداخلت نہ کرنے کی ہدایت کی گئی۔

لیکن وزیر داخلہ جیرالڈ ڈرمینین نے کسانوں کو متنبہ کیا کہ "رنگیس، پیرس کے ہوائی اڈوں اور پیرس میں داخل نہ ہوں۔ لیکن اگر ہمیں مجبور کیا گیا، تو یقیناً ہم اس کی کبھی اجازت نہیں دیں گے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں