غزہ سے فلسطینیوں کو مصر میں جبراً دھکیلنا مسترد کرتے ہیں: وزیر خارجہ فرانس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فرانس کے وزیر خارجہ سٹیفن سیجورن نے اپنے منصب کو سنبھالنے کے بعد مشرق وسطیٰ کے پہلے دورے کے موقع پر مصر میں ایک نیوز کانفرنس سے خطاب میں مصری موقف کی تائید کرتے ہوئے رفح سے فلسطینیوں کو جبراً پناہ گزینی کے لیے دھکیلنے کی مخالفت کی ہے۔

وزیر خارجہ سیجورن نے مصری وزیر خارجہ سامح شکری کے ساتھ پہلی مشترکہ کانفرنس سے خطاب میں کہا ' ہم اس بارے میں مصر کے تحفظات اور تشویش کو سمجھتے ہیں کہ رفح سے فلسطینیوں کی مصری علاقے میں جبری نقل مکانی قبول نہیں کرتے۔'

ہم مکمل طور پر اسی موقف پر ہیں۔ اس لیے فلسطینیوں کو جبراً مصر کی طرف دھکیلنے کی ہر کوشش کی مذمت بھی کرتے ہیں اور اسے مسترد بھی کرتے ہیں۔ '

خیال رہے اقوام متحدہ کے مطابق رفح میں گیارہ لاکھ سے زائد فلسطینی نقل مکانی کے بعد پناہ لیے ہوئے ہیں۔ اب انہیں بمباری کر کے اسرائیل مزید آگے مصری علاقے میں دھکیلنا چاہتا ہے۔

فرانسیسی وزیر خارجہ نے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا ' انسانی بنیادوں پر غزہ میں جنگ بندی بارے نئے سرے سے مذاکرات شروع کر کے دوریاستی حل کی طرف جانے کا کہا ۔ ان کا دوریاستی حل کے حوالے سے کہنا تھا حتمی سیاسی حل کے لیے چیزوں کی اسی طرف نشاندہی ہوگی۔

وزیر خارجہ سیجورن کے مطابق مسئلے کا تقاضا بھی یہی ہے کہ یہ اپنے منطقی حل کی طرف بڑھے اور غزہ کے مسئلے کو دوریاستی حل کے ساتھ جوڑا جائے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں