امریکہ کی جانب سے ویٹو پر چین کا ’شدید مایوسی‘ کا اظہار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چین نے اقوام متحدہ میں اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ بندی کے لیے لائی جانے والی قرارداد کو امریکہ کی جانب سے ویٹو کیے جانے پر ’شدید مایوسی‘ کا اظہار کیا ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے رائٹرز کے مطابق اقوام متحدہ میں چین کے نمائندے ژانگ جون نے سلامتی کونسل پر زور دیا کہ ’معاملے کو سیز فائر کی طرف بڑھایا جائے کیونکہ یہ کونسل کی ذمہ داری ہے جس سے یہ پیچھے نہیں ہٹ سکتی۔‘

امریکہ نے منگل کو تیسری بار اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں غزہ میں جنگ بندی کے لیے پیش کی جانے والی قرارداد کے خلاف ووٹ دیا تھا جس سے انسانی بنیادوں پر سیز فائر کے مطالبے کی راہ میں رکاوٹ پیدا ہو گئی ہے۔

امریکہ کا کہنا ہے کہ الجزائر کی طرف پیش کی گئی قراردار کا مسودہ امریکہ، مصر، اسرائیل اور قطر کے درمیان ہونے والی ’حساس بات چیت‘ کو خطرے میں ڈال سکتا ہے، جو کہ لڑائی میں وقفے اور مغویوں کی رہائی کے مقصد کے تحت کیے جا رہے ہیں۔

اقوام متحدہ میں چین کے نمائندے ژانگ جون کا کہنا ہے کہ ’چین امریکہ کے ویٹو پر عدم اطمینان اور شدید مایوسی کا اظہار کرتا ہے۔‘

ژانگ جون کا مزید کہنا تھا کہ امریکہ کے ویٹو سے غلط پیغام گیا ہے جس سے غزہ میں صورت حال مزید خطرات کی طرف بڑھے گی۔ ’غزہ میں جنگ بندی پر اعتراض وہاں خون بہانے کی اجازت دینے کے سوا کچھ اور نہیں۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ تنازعات کے پھیلاؤ سے مشرق وسطٰی کا خطہ غیر مستحکم ہو رہا ہے اور وسیع جنگ کے خطرات بڑھ رہے ہیں۔ ان کے مطابق ’غزہ میں جنگ کے شعلوں کو بجھا کر ہی دنیا پورے خطے کو لپیٹ میں آنے سے روک سکتی ہے۔‘

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں