امریکی سینٹرل کمانڈ کا چھ حوثی کروز میزائل اور ڈرون کو تباہ کرنے کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی سینٹرل کمانڈ نے حوثیوں کی جانب سے بحیرہ احمر میں مزید حملوں کی دھمکی کے چند گھنٹے بعد یمن میں حوثی گروپ کے نئے ٹھکانوں پر حملہ کیا ہے۔

امریکی سینٹرل کمانڈ نے اعلان کیا ہے کہ اس کی افواج نے یمن میں ایرانی حمایت یافتہ حوثی گروپ سے تعلق رکھنے والے چھ اینٹی شپ کروز میزائلوں کو نشانہ بنایا۔ یہ کروز میزائل بحیرہ احمر کی طرف داغے جانے کے لیے تیار تھے۔

سینٹرل کمانڈ نے ’ایکس‘ پلیٹ فارم پر جمعہ کو ایک بیان میں کہا کہ اس کی افواج نے کل شام اپنے دفاع میں جنوبی بحیرہ احمر کے اوپر ایک ڈرون کو بھی مار گرایا۔

انہوں نے وضاحت کی کہ "فوجی حکام نے فیصلہ کیا کہ میزائل اور ڈرون "خطے میں تجارتی بحری جہازوں اور امریکی بحریہ کے بحری جہازوں کے لیے خطرہ ہیں۔

ایک امریکی طیارہ یمن میں حوثیوں کے ٹھکانوں پر حملہ کرنے کے لیے اڑان بھررہا ہے
ایک امریکی طیارہ یمن میں حوثیوں کے ٹھکانوں پر حملہ کرنے کے لیے اڑان بھررہا ہے

"عسکری سرپرائز"

یہ کارروائی حوثی رہ نما عبدالملک الحوثی کی جانب سے بحیرہ احمر میں ایک نئی کشیدگی کی دھمکی دینے کے بعد سامنے آیا ہے۔ عبدالملک الحوثی نے کہا تھا کہ ان کا گروپ "فوجی سرپرائز اور غیر متوقع کارروائیاں" کرے گا۔

انہوں نے کل ایک تقریر میں کہا کہ گروپ نے کارروائیوں کے آغاز سے اب تک 54 بحری جہازوں کو نشانہ بنایا ہے۔ بحیرہ احمر میں بحری جہازوں پر داغے گئے میزائلوں اور ڈرونز کی کل تعداد 384 تک پہنچ گئی ہے۔

7 اکتوبر کو غزہ کی پٹی میں اسرائیلی جنگ کے آغاز کے بعد سے خطے میں کئی محاذوں پر کشیدگی بڑھ چکی ہے اور اس کشیدگی کا فیوز اس بین الاقوامی طور پر اہم شپنگ لین تک بھی پھیل گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں