فلسطین اسرائیل تنازع

اسپین، مصر کے وزرائے خارجہ کا فلسطینی ریاست، غزہ کے لیے مزید امداد کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

ہسپانوی وزیرِ خارجہ جوز مینوئل الباریس نے جمعرات کو عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ اسرائیل کے "شانہ بشانہ فلسطینی ریاست" کے درمیان امن کے لیے "پہلے قدم کے طور پر" غزہ میں جنگ بندی کے لیے احتجاج کرے۔

قاہرہ میں جہاں الباریس نے مصری صدر عبدالفتاح السیسی سے بھی ملاقات کی، مصری وزیرِ خارجہ سامح شکری کے ساتھ ایک مشترکہ کانفرنس میں اسپین کے اعلیٰ سفارت کار نے کہا کہ "فلسطین کو امن سے رہنے کی اجازت دینے کے لیے ایک فریم ورک ہونا چاہیے۔"

الباریس نے کہا، "جنگ بندی اور انسانی تباہی کا خاتمہ ہونا چاہیے جس کا شکار ایک معصوم شہری آبادی ہو رہی ہے۔"

انہوں نے عالمی برادری سے بھی مطالبہ کیا کہ وہ "معصوم فلسطینیوں پر جو اپنی جانیں گنوا بیٹھے ہیں" اور "قحط کا شکار" ہیں، ان پر "اپنی نظریں مرکوز کریں۔"

اقوامِ متحدہ نے بارہا غزہ کی پٹی میں خاص طور پر اس علاقے کے شمالی حصے میں قحط کے بارے میں خبردار کیا ہے۔

مصر کے صدارتی ترجمان کے مطابق السیسی اور الباریس نے فلسطینی پناہ گزینوں کے لیے اقوامِ متحدہ کے ادارے اونروا کی "حمایت کی ضرورت" پر بات چیت کی جو غزہ میں امداد کو مربوط کرتا ہے۔

اسرائیل کے الزامات کہ سات اکتوبر کو حماس کے اسرائیل پر حملے میں اونروا کے 13,000 میں سے تقریباً ایک درجن ملازمین ملوث تھے، اس کے بعد متعدد عطیہ دہندہ ممالک بشمول امریکہ نے فنڈنگ روک دی تھی۔ تب سے ایجنسی کو فنڈنگ کے بحران کا سامنا ہے۔

میڈرڈ نے اس ماہ اونروا کے لیے اضافی 20 ملین یورو کی فنڈنگ کا اعلان کیا۔

اسرائیل کی جارحیت پر سب سے زیادہ تنقید کرنے والے یورپی ممالک میں آئرلینڈ اور بیلجیئم کے ساتھ ساتھ اسپین بھی شامل رہا ہے اور بار بار فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنے کے لیے دباؤ ڈالتا رہا ہے۔

'دانستہ تاخیر'

الباریس اور شوکری نے غزہ میں امدادی کارروائیوں کو تیز کرنے کی ضرورت کا اعادہ کیا جن میں سے مؤخر الذکر نے خبردار کیا کہ حالیہ ہوائی راستے سے گرائی گئی امداد اور ایک طے شدہ میری ٹائم امدادی راہداری کافی نہیں تھی۔

شوکری نے کہا کہ ہوائی راستے سے گرائی گئی امداد جس میں مصر نے حصہ لیا ہے، "حجم میں محدود تھی" اور "ان شہریوں کے لیے خطرہ بن سکتی تھی جن کی مدد ان کا مقصد تھا"۔

پچھلے ہفتے پیراشوٹ کی خرابی کی وجہ سے غزہ میں پانچ افراد کی موت واقع ہو گئی۔

دریں اثناء ہسپانوی خیراتی جہاز اوپن آرمز قبرص سے پہنچ رہا ہے اور واشنگٹن نے امریکی فوجیوں کو حکم دیا ہے کہ وہ غزہ کے قریب ایک عارضی بحری عرشہ تعمیر کریں۔

لیکن امریکی حکام توقع کرتے ہیں کہ عرشے کی تعمیر میں دو ماہ تک کا وقت لگے گا۔

شوکری نے کہا، "ہم دو مہینے تک کیا کریں؟ کیا بچے انتظار میں مرتے رہیں؟"

انہوں نے کہا، "ہمیں حقیقت پسندانہ طور پر اس سے نمٹنا چاہیے" اور مزید کہا، "اب ہمارے لیے جو کچھ دستیاب ہے وہ زمینی گذرگاہ ہے۔"

شوکری نے کہا، "چھ گذرگاہیں ہیں جن پر اسرائیل کا کنٹرول ہے اور انہیں انسانی امداد کے لیے کھولا جانا چاہیے۔"

انہوں نے کہا، تاخیر کی وجہ غزہ-مصر سرحد پر گذرگاہ پر تمام امدادی کھیپوں کا اسرائیلی معائنہ ہے نہ کہ مصری پابندیاں۔

شوکری نے کہا ٹرکوں کو " اجازت دینے میں جان بوجھ کر تاخیر کی جاتی ہے جس کا مقصد غزہ میں فلسطینی عوام کے محاصرے کو طول دینا ہے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں