امریکہ اور برطانیہ کے یمن میں مغربی حدیدہ میں حوثی ٹھکانوں پر چھ حملے

حوثیوں کا کہنا ہے کہ وہ غزہ کی پٹی کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے بحیرہ احمر سے گزرنے والے اسرائیلی کمپنیوں کی ملکیت یا ان کے زیر انتظام یا اسرائیل کی جانب سامان لے جانے والے بحری جہازوں کو نشانہ بنا رہے ہیں۔

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

حوثیوں کے زیر انتظام مسیرہ ٹی وی چینل نے اطلاع دی ہے کہ یمن کے شہر الحدیدہ کے مغرب میں التحیتا اور الجبانہ ضلع کے الفازہ علاقوں پر امریکہ اور برطانیہ نے چھ حملے کئے ہیں۔

واضح رہے بحیرہ احمر کو مشرق وسطیٰ، افریقہ اور یورپ کے درمیان انٹرنیٹ ٹریفک کا بڑا راستہ شمار کیا جاتا ہے۔ سمندر کے نیچے موجود کیبلز کے ذریعے 99 فیصد بین البراعظمی ڈیٹا منتقل کیا جاتا ہے۔

حوثیوں کا کہنا ہے کہ وہ غزہ کی پٹی کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے بحیرہ احمر سے گزرنے والے اسرائیلی کمپنیوں کی ملکیت یا ان کے زیر انتظام یا اسرائیل کی جانب سامان لے جانے والے بحری جہازوں کو نشانہ بنا رہے ہیں۔

جمعرات کو یمن میں گروپ کے سربراہ عبدالمالک الحوثی نے اسرائیل سے منسلک بحری جہازوں پر گروپ کے حملوں میں توسیع کا اعلان کیا تھا۔ انہوں نے اپنے حملوں کے اہداف کو توسیع دیتے ہوئے بحیرہ احمر کو عبور کرنے سے گریز کرنے والے بحری جہازوں کو بھی شامل کیا تھا۔

اس سٹریٹجک خطے میں امریکہ میری ٹائم نیویگیشن کی "تحفظ" کے مقصد کے ساتھ ایک بین الاقوامی سمندری اتحاد کی قیادت کر رہا ہے۔ اس خطے سے عالمی تجارت کا 12 فیصد حصہ گزرتا ہے۔ 12 جنوری سے امریکہ اور برطانیہ نے حوثی گروپ اور اس کی نقل و حرکت کی صلاحیتوں کو محدود کرنے کے مقصد کے تحت حملے شروع کر رکھے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں