فلسطین اسرائیل تنازع

امریکی وزیر دفاع کا اپنے اسرائیلی ہم منصب سے فلسطینیوں کے تحفظ کو یقین بنانے پر زور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی وزیر دفاع لائیڈ آسٹن نے اپنے اسرائیلی ہم منصب یوآو گیلنٹ کے ساتھ ملاقات میں زور دیا کہ "عام فلسطینیوں کو نقصان سے بچانا ایک اخلاقی اور تزویراتی معاملہ ہے‘‘۔ انہوں نے غزہ کی صورتحال کو "انسانی تباہی" قرار دیا۔

یہ بات امریکی محکمہ دفاع (پینٹاگان) کے ہیڈ کوارٹر میں اپنے اسرائیلی ہم منصب سے ملاقات کے دوران سامنے آئی۔

آسٹن نے کہا کہ آج غزہ میں شہریوں کی ہلاکتوں کی تعداد بہت زیادہ ہے اور انسانی امداد کا حجم بہت کم ہے۔

ملاقات کے بعد پینٹاگان کے ایک سینیر اہلکار نے صحافیوں سے بات کی۔ العربیہ کے نامہ نگار نے بتایا کہ آسٹن نے اس بات پر زور دیا کہ "شہریوں کا تحفظ بہت اہم ہے اور گیلنٹ نے یقین دہانی کرائی کہ وہ غزہ میں جاری جنگ میں فلسطینی شہریوں کا ہرممکن تحفظ یقینی بنائیں گے‘‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہم رفح اورکارم شالوم کراسنگ سے غزہ میں داخل ہونے کے لیے مزید امداد چاہتے ہیں"۔

انہوں نے وضاحت کی کہ "تمام امریکی فوجی امداد اس یقین دہانی کے ساتھ فراہم کی جاتی ہے کہ اس کا استعمال بین الاقوامی قانون اور جنگی معاہدوں کا احترام کرتا ہے"۔

پینٹاگان کے اہلکار نے فلسطینی شہریوں کو محفوظ بنانے اور مصر کے ساتھ ہم آہنگی کی ضرورت پر زوردیا۔

قبل ازیں پینٹاگان کے پریس سیکرٹری جنرل پیٹ ریڈر نے پیر کے روز صحافیوں کو بتایا کہ اسرائیل کی جانب سے رواں ہفتے واشنگٹن کے ایک اعلیٰ سطحی وفد کا دورہ منسوخ کیے جانے کے باوجود اسرائیلی وزیر دفاع گیلنٹ کے ساتھ آسٹن کی صبح طے شدہ ملاقات اب بھی ہوئی ہے۔

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے پیر کے روز اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد کے خلاف احتجاجاً دورہ منسوخ کر دیا تھا۔ اس قرارداد میں فوری طور پرغزہ میں جنگ بندی کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں