سپین : فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنے کے لئے یورپی یونین ارکان کو قائل کرے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سپین کے وزیر اعظم پیڈرو سانچیز اگلے ہفتے کے دوران اپنے یورپی یونین کے شراکت داروں سے ملاقاتیں کریں گے تاکہ انہیں فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنے کی حمایت پر امادہ کر سکیں۔

اس امر کا اعلان سپین کی حکومت کی ترجمان نے منگل کے روز کیا ہے۔ ترجمان پیلر ایلیگیریا کے مطابق سانچیز کے ساتھ اس ایجنڈے کے لئے ان کے ساتھ ناروے، آئر لینڈ ، پرتگال ، سلووینیا اور بیلجئیم کے وزرائے اعظم ہوں گے۔ یہ رہنما یورپی یونین کی اسرائیل حماس جنگ کے بارے میں بات چیت کریں گے،

ترجمان سپین نے مزید کہا ' ہم چاہتے ہیں کہ غزہ میں انسانی تباہی و بحران کا خاتمہ ہو۔ ایک عمل کے ذریعے سیاسی کوششیں ہوں تاکہ اس دیرنہ مسئلے کا دو ریاستی حل تک جلد سے جلد پہنچ سکیں۔

واضح رہے سانچیز اس سے پہلے بھی کہہ چکے ہیں کہ وہ ماہ جولائی تک فلسطینی ریاست کو تسلیم کر لیں گے اور جلد ایک عام تنقیدی ماحول ممکن ہو جائے گا ۔ جس کے نتیجے میں فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنے کے لئے یورپی یونین کے کئی رکن ایک بڑی پیش رفت کر سکیں گے۔

جیسا کہ سپین،آئر لینڈ مالٹا اور سلووینیا پہلے ہی پچھلے ماہ سے ہہ اعلان کر چکے ہیں کہ وہ مل کر فلسطینی ریاست کے قیام کے لئے کوششیں کریں گے۔جبکہ ان کے اس اعلان پر اسرائیل نے سخت رد عمل دیتے ہوئے اس اعلان کو ان ملکوں کا دہشت گردی کے لئے انعام قرار دیا تھا۔

واضح رہے اسرائیل کی غزہ میں پچھلے سال سے جاری جنگ کے نتیجے میں اب تک تقریبا 33300 فلسطینی عوام قتل ہو چکے ییں۔ ان ہلاک ہونے والوں میں بہت بڑی تعداد عورتوں اور بچوں کی یے۔ سپین اور کئی دوسرے یورپی ملک اس مسئلے کے حل کے طور پر فلسطینی ریاست کو تسلیم کر کے خطے میں پائیدار امن ممکن ہوتا دکھتے ییں۔

یاد رہے اقوام متحدہ کے 193 رکن ملکوں میں سے اب تک 139 ملک لسطینی ریاست کو تسلیم کرتے ہیں۔ سانچیز اس سلسلے میں اپنی مہم 12:اپریل سے ناروے سے شروع کرنے جارہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں