اسرائیل ہو یا ایران، اپنی فضائی حدود کی خلاف ورزی نہیں ہونے دینگے: اردن

حالیہ کشیدگی صرف غزہ پر اسرائیلی جارحیت سے توجہ ہٹانے کے کام آرہی: اردنی وزیر خارجہ کی ایرانی ہم منصب سے گفتگو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن کے وزیر خارجہ ایمن الصفدی نے اپنے ایرانی ہم منصب حسین امیر عبداللہیان کو بتایا ہے کہ اسرائیل ہو یا ایران اردن اپنی فضائی حدود کی خلاف ورزی کی اجازت کسی کو نہیں دے گی۔ اردن کے نائب وزیر اعظم اور امور خارجہ کے وزیر ایمن الصفدی نے خطے میں رونما ہونے والی خطرناک کشیدگی کو کم کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور اس بات کا اعادہ کیا کہ اردن اپنی سرزمین کو اسرائیل اور ایران کے درمیان تنازع کے میدان میں تبدیل ہونے کی اجازت نہیں دے گا۔

الصفدی نے ایران کے خلاف اسرائیلی حملے کی خبر کے بعد اپنے ایرانی ہم منصب حسین امیر کے ساتھ ایک فون کال میں کہا کہ اردن ایران یا اسرائیل کو اردن کی فضائی حدود کی خلاف ورزی کرنے کی اجازت نہیں دے گا۔ انہوں نے زور دیا کہ موجودہ کشیدگی صرف غزہ کے خلاف اسرائیلی جارحیت سے توجہ ہٹانے کے لیے کام آرہی ہے۔ اس کشیدگی کو روکنا اولین ترجیح ہونی چاہیے اور اس کے لیے تمام تر کوششوں کو بروئے کار لانا چاہیے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ان کا ملک اردن کا احترام کرتا ہے اور اس کی سلامتی اور خطے کی سلامتی کا خواہاں ہے۔ الصفادی نے "ایکس" پر بھی اپنی پوسٹ میں کہا کہ علاقائی کشیدگی ایک خطرہ ہے جسے روکنا ضروری ہے۔ ہم علاقائی جنگ کی طرف دھکیلنے والے تمام اقدامات کی مذمت کرتے ہیں۔ اسرائیل ایران کشیدگی کو رکنا چاہیے۔ اب یہی ہماری ترجیح ہے۔ دنیا کی توجہ غزہ پر اسرائیلی جارحیت اور اسے فوری طور پر روکنے کی کوششوں سے ہٹانے کی اجازت نہیں دی جانی چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں